’ماں بننے کا تاوان‘ تنخواہوں میں کمی

تصویر کے کاپی رائٹ PA
Image caption نصف اوقات میں کام کرنے کے وجہ سے خواتین کی اجرت میں وہ اضافہ نہیں ہوتا جو مردوں کے مکمل اوقات میں کام کرنے کی وجہ سے ہوتا رہتا ہے

انسٹیٹیوٹ فار فِسکل سٹڈیز کے مطابق وہ عورتیں جو بچہ جنم دینے کے بعد جزوقتی طور پر اپنی ملازمت پر واپس آتی ہیں، وہ بعد کے کئی برس بعد تک بھی ان کی تنخواہ مردوں کے مقابلے پر کم ہوتی ہیں۔

ادارے کے مطابق مردوں اور عورتوں کی اجرت کا یہ فرق بچوں کی پیدائش کے بعد کے برسوں میں بتدریج بڑھتا ہی جاتا ہے۔

آئی ایف ایس کے مطابق خواتین ترقی کے مواقع کھو دیتی ہیں اور انھیں کام کا تجربہ بھی کم ہوتا ہے اور یہ عوامل ان کی آمدن میں اضافے نہ ہونے کا باعث بنتے ہیں۔

برطانیہ میں گذشتہ 12 برس کے دوران یہ فرق بڑھ کر 33 فیصد تک پہنچ گیا ہے۔

آئی ایف سی کے رکن رابرٹ جوئس کا کہنا تھا کہ ’خواتین کے کام کے اوقات کم کرنے کے بعد ان کی آمدن میں فوری کمی واقع نہیں ہوتی۔‘

اس کے بجائے ہوتا یہ ہے کہ نصف اوقات میں کام کرنے کی وجہ سے ان کی اجرت میں وہ اضافہ نہیں ہوتا جو مردوں کے مکمل اوقات میں کام کرنے کی وجہ سے ہوتا رہتا ہے۔ اور یہ فرق وقت کے ساتھ ساتھ بڑھتا چلا جاتا ہے۔

اس کے علاوہ وہ خواتین بھی جو کام سے طویل چھٹی لے لیتی ہیں، جب وہ واپس آتی ہیں تو تنخواہوں میں اضافے کے مواقع ضائع ہو چکے ہوتے ہیں۔

تحقیق کے مطابق عمومی طور پر خواتین کی آمدن مردوں کی نسبت 18 فیصد کم ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ .
Image caption بچوں کی پیدائش کے بعد کئی خواتین محض جز وقتی ملامت کو ترجیح دیتی ہیں

پہلے بچے کی پیدائش کے بعد کام کرنے کی فی گھنٹہ اجرت کا یہ فرق تیزی سے بڑھنے لگتا ہے۔

ٹریڈ یونین کونسل کے سیکرٹری فرانسس او گریڈی کا کہنا تھا: ’یہ بہت اہانت آمیز ہے کہ لاکھوں خواتین کو ماں بننے کا تاوان ادا کرنا پڑتا ہے۔

’کئی خواتین کو اپنی ذمہ داریوں کے دباؤ کے ساتھ ساتھ بہتر تنخواہوں کی تلاش میں نوکری چھوڑنی پڑتی ہے کیونکہ ملازمتوں میں لچک نہیں ہوتی۔‘

البتہ تنخواہوں کا یہ 18 فرق فیصد کا فرق ماضی کے مقابلے مںی کافی کم ہے۔ اس سے پہلے 1993 میں یہ 28 فیصد، جبکہ سنہ 2003 میں 23 فیصد تھا۔

بچوں کی پیدائش کے بعد کئی خواتین محض جز وقتی ملازمت کو ترجیح دیتی ہیں۔

آئی ایف ایس کے مطاق پہلے بچے کی پیدائش کے بعد گذشتہ 20 برسوں میں خواتین نے مردوں کے مقابلے میں چار سال کم کام کیا۔

جبکہ 20 برس میں خواتین کے عمومی کام کے مقابلے میں مردوں نے 20 گھنٹے ہفتے میں کام کر کے نو سال زیادہ کام کیا۔

اسی بارے میں