اٹلی میں زلزلے سے 268 ہلاک، ہنگامی حالت نافد

اپ کی ڈیوائس پر پلے بیک سپورٹ دستیاب نہیں

اٹلی کے وسطی حصے میں بدھ کو آنے والے شدید زلزلے میں ہلاک ہونے والے افراد کی تعداد 265 سے تجاوز کر گئی ہے اور ملبے تلے دبے افراد کے زندہ بچنے کی امید کم ہوتی جا رہی ہے۔

حکام نے زلزلے سے متاثرہ علاقوں میں ہنگامی حالت نافذ کر دی ہے اور وزیرِ اعظم میتیو رینزی نے بحالی کے اقدامات کے لیے 50 ملین یورو فراہم کرنے کا وعدہ کیا ہے۔

٭ اٹلی: زلزلے میں ہلاکتوں کی تعداد 159، درجنوں لاپتہ

٭ اٹلی میں زلزلے سے تباہی: تصاویر میں

اٹلی میں بدھ کو آنے والے زلزلے کے نتیجے میں 268 افراد کی ہلاکت اور 400 کے زخمی ہونے کی تصدیق ہو چکی ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ AP

حکام کے مطابق پانچ ہزار امدادی کارکنان ملبے میں دبے لاپتہ افراد کی تلاش جاری رکھے ہوئے ہیں تاہم زلزلے کے جھٹکوں کی وجہ سے امدادی کارروائیوں میں مشکلات کا سامنا ہے۔

جمعرات کو 4.3 شدت کے ایک زلزلے کے بعد امدادی کارکنوں کو پہلے سے متاثرہ عمارتوں سے لاپتہ افراد کی تلاش کے کام کو روکنا پڑا۔

اماٹریس میں بھی زلزلے کے جھٹکے محسوس کیے گئے جس کے نتیجے میں گرد اور دھول کا ایک بگولہ ہوا میں بلند ہوتا دیکھا گیا۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP

اس سے پہلے بی بی سی نامہ نگار جینی ہِل کے مطابق امدادی کارکنوں نے صحافیوں اور وہاں موجود دیگر افراد سے کہا ہے کہ اماٹریس سے فوری طور پر چلے جائیں کیونکہ شہر میں عمارتین خود بخود زمین بوس ہو رہی ہیں۔

حکام کے مطابق سب سے زیادہ ہلاکتیں اماٹریس میں ہوئی جہاں 184 افراد ہلاک ہوئےجو زلزلے کے مرکز کے قریب واقع ہے۔

اٹلی کے وزیراعظم میتیو رینزی نے کہا ہے کہ ہلاکتوں کی تعداد حتمی نہیں ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty

اٹلی کے وزیرِ صحت کا کہنا ہے کہ مرنے والے افراد میں زیادہ تعداد بچوں کی ہے اور اس بات کا خدشہ ہے کہ یہ تعداد مزید بڑھ سکتی ہے۔

زلزلے سے بڑی تعداد میں عمارتیں منہدم ہو گئیں اور لینڈ سلائیڈنگ کی وجہ سے سڑکوں کو بھی نقصان پہنچا ہے۔

وزیراعظم میتیو رینزی نے زلزلے سے متاثرہ علاقے کے دورے میں وعدہ کیا کہ کسی خاندان، کسی شہر اور کسی گاؤں کو اس آفات میں تنہا نہیں چھوڑا جائے گا۔

تصویر کے کاپی رائٹ EPA

انھوں نے زلزلے کے بعد فوری طور پر متاثرہ علاقوں میں رات کے وقت امدادی کارروائیاں شروع کرنے پر امدادی کارکنوں کو خراج تحسین پیش کیا۔

امدادی کارکنوں نے پیسکارا ڈیل ٹورنٹو میں دو لڑکوں کو ملبے سے زندہ بھی نکالا ہے۔ امدادی کارکنوں کا کہنا ہے کہ دونوں لڑکوں نے چارپائی کے نیچے چھپ کر زندگی بچانےمیں کامیاب رہے ہیں۔

پیسکارا ڈیل ٹورنٹو گاؤں کے علاوہ اماٹریس نامی قصبہ بھی زلزلے سے شدید متاثر ہوا ہے اور وہ ملبے کا ڈھیر بن چکا ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ AP

بی بی سی کے نامہ نگار جیمز رینالڈ جو اس وقت اماٹریس میں موجود ہیں، کا کہنا ہے کہ امدادی کارکن سونگھنے والے کتوں کی مدد سے ملبے میں پھنسے ہوئے لوگوں کا پتہ لگانے کی کوشش کر رہے ہیں۔ مقامی حکام یہ پتہ لگانے میں مصروف ہیں کہ ابھی تک کتنے لوگ لاپتہ ہیں۔

ماضی کے زلزلوں کے اعداد و شمار کے مطابق خدشہ ہے کہ یہ زلزلہ بھی کافی نقصان دہ ہو سکتا ہے۔

اسی بارے میں