ترکی میں 28 منتخب میئرز کی برطرفی کے بعد ہنگامہ آرائی

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption پولیس کی جانب سے 200 کے قریب مظاہرین کو آنسو گیس اور پانی کی تیز دھاروں کے ذریعے منتشر کرنے کی کوشش کی گئی

ترکی کے جنوب مشرقی علاق میں کُرد اکثریتی قصبوں کے 28 منتخب میئرز کو ان کے عہدوں سے برطرف کیے جانے کے بعد ہنگاموں کا آغاز ہوگیا ہے۔

٭ ترک میں عدالتوں کے بعد کمپنیوں پر چھاپے

٭82 ہزار افراد ملازمت سے معطل یا برخاست

خیال رہے کہ ترکی میں جولائی میں ناکام فوجی بغاوت کے بعد لگائی جانے والی ایمرجنسی کے نتیجے میں حکومت نے بہت سے فوجی افسران سمیت مختلف اداروں میں کام کرنے والے ہزاروں افراد کو ان کے عہدوں سے برطرف کر دیا تھا۔

برطرف ہونے والے میئرز کی جگہ حکومت نے اپنے با اعتماد میئرز کو تعینات کیا ہے۔

نجی خبر رساں ادارے دوگان کے مطابق پولیس نے سورک میں سٹی ہال کے باہر موجود 200 کے قریب مظاہرین کو آنسو گیس اور پانی کی توپوں سے منتشر کرنے کی کوشش کی۔

دوگان کے مطابق ہاکاری صوبے میں جھڑپوں کے بعد نائب میئر سمیت چار افراد کو برطرف کیا گیا۔

ترک میڈیا کے مطابق متاثرہ علاقوں میں ان واقعات کے نتیجے میں بجلی اور انٹرنیٹ کی فراہمی بند کر دی گئی۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP

ترک خبر رساں ادارے انادولو کا کہنا ہے کہ برطرف ہونے والے 28 میں سے 24 میئرز کو کردستان ورکر پارٹی کے ساتھ تعلقات کے شبہے میں عہدوں سے ہٹایا گیا ہے۔

دیگر میئرز کے بارے میں خیال کیا جاتا ہے کہ ان کا فتح اللہ گولن کے ساتھ تعلق ہے۔

خیال رہے کہ فتح اللہ گولن امریکہ میں خود ساختہ جلا وطنی کی زندگی بسر کرنے والے ترک مبلغ ہیں۔

انھوں نے ترکی میں حکومت کا تختہ الٹنے کی سازش میں ملوث ہونے کے الزامات سے انکار کیا ہے تاہم ترک حکومت کا دعویٰ ہے کہ اس پیچھے گولن کا ہاتھ ہی ہے۔

وزیرِ انصاف بکر بوزداگ نے سماجی رابطوں کی ویب سائٹ ٹویٹر پر لکھا کہ ’میئرز اور ٹاؤن کونسلرز جوانتخابات کے ذریعے اقتدار میں آئے ہیں کو قانون کے مطابق انپی ڈیوٹی ضرور ادا کرنی چاہیے۔‘

کرد نواز ڈیموکریٹک پارٹی ایچ ڈی پی جس سے تعلق رکھنے والے زیادہ تر میئرز متاثر ہوئے ہیں نے اس اقدام کی مذمت کی ہے۔

اسی بارے میں