پی ٹی ایم کے گرفتار کارکنوں کی ضمانت منظور

منظور پشتین

،تصویر کا ذریعہAlamy

،تصویر کا کیپشن

منظور پشتین

اسلام آباد میں انسداد دہشت گردی کی عدالت نے پی ٹی ایم کے گرفتار 37 کارکنوں کی پچاس پچاس ہزار کے مچلکوں کے عوض ضمانت منظور کرلی ہے تاہم اُن کو جمعرات کو رہا کیا جائے گا۔

پشتون تحفظ موومنٹ کے ان کارکنوں کو چار جون کو نیشنل پریس کلب کے سامنے سے اُس وقت گرفتار کیا گیا تھا جب وہ وانا میں پی ٹی ایم کے ایک رہنما علی وزیر پر حملے کے خلاف احتجاج کر رہے تھے۔ حکام کے مطابق ان کارکنان کو دفعہ 144 کے تحت گرفتار کیا گیا تھا۔

یہ بھی پڑھیے

نامہ نگار خدائے نور ناصر کے مطابق بدھ کو انسداد دہشت گردی کی عدالت نمبر ون میں جج کوثر عباس نے استفسار کیا کہ گرفتار کارکنوں کے خلاف ایف آئی آر میں دہشت گردی کی دفعات کیسے شامل ہوگئیں۔ جس کے جواب میں انسپکٹر نے عدالت کو بتایا کہ مجسٹریٹ کو مظاہرین کی ویڈیو دکھانے پر انھوں نے 7 اے ٹی اے شامل کرنے کا حکم دیا تھا۔

اسلام آباد میں پی ٹی ایم کے کارکنوں نے بی بی سی کو بتایا کہ تمام گرفتار کارکنوں کی ضمانت کے لیے پیسے اکٹھے کیے جاچکے ہیں اور کل بروز جمعرات جمع ہوں گے، جس کے بعد گرفتار کارکن رہا کیے جائیں گے۔

یاد رہے کہ رمضان میں پی ٹی ایم اور حکومتی جرگے کے درمیان مذاکرات میں یہ طے پایا تھا کہ عیدالفطر سے پہلے پی ٹی ایم کے تمام گرفتار کارکنوں کو رہا کیا جائے گا اور پی ٹی ایم عید کے فوراً بعد رزمک میں ہونے والا جسلہ ملتوی کرے گی۔

موومنٹ کے سربراہ منظور پشتین نے پیر کو ایک فیس بک لائیو میں حکومتی جرگے پر شدید تنقید کرتے ہوئے کہا تھا کہ اُنہوں نے جرگے کے ساتھ کیا گیا وعدہ نبھایا لیکن جرگے نے اُن کے ساتھ کیے گئے وعدے کے باوجود پی ٹی ایم کے گرفتار کارکنوں کو رہا نہیں کیا۔

منظور پشتین نے اس ویڈیو میں کہا تھا کہ اگر بیس جون تک اسلام آباد میں اُن کے گرفتار کارکنوں کو رہا نہیں کیا گیا تو وہ ملک گیر احتجاج کی کال دیں گے۔