سونو نگم کی اذان کے بارے میں ٹویٹس، سوشل میڈیا پر شدید رد عمل

انڈیا

،تصویر کا ذریعہAFP

انڈیا کے معروف گلوکار سونو نگم کی اذان کے بارے میں ٹویٹس اور ان سے متعلق رد عمل پیر کو سارا دن سماجی رابطوں کی ویب سائٹ ٹوئٹر پر گردش کرتے رہے۔

معاملہ شروع ہوا جب انڈیا کے مقامی وقت کے مطابق صبح ساڑھے پانچ بجے انھوں نے اپنی پہلی ٹویٹ کی کہ 'خدا آپ سب کا بھلا کرے۔ میں مسلمان نہیں ہوں اور مجھے اذان کی آواز سن کر صبح اٹھنا پڑتا ہے۔ انڈیا میں مذہبی زبردستی کب ختم ہو گی۔'

،تصویر کا ذریعہTwitter

،تصویر کا کیپشن

سونو نگم کی صبح کی جانے والی پہلی ٹویٹ

اگلے دس منٹ میں انھوں نے چند اور ٹویٹس کی جن میں انھوں نے اپنی ناراضی کا مزید اظہار کیا۔ ایک ٹویٹ میں انھوں نے کہا 'میں کسی ایسے مندر یا گردوارا پر یقین نہیں رکھتا جو بجلی استعمال کر کے اُن لوگوں کو اٹھائیں جو ان کے مذہب کے پیروکار نہیں ہیں۔'

سونو نگم کی جانب سے صبح کی جانے والی آخری ٹویٹ تھی 'غنڈہ گردی ہے بس۔۔۔'

،تصویر کا ذریعہTwitter

ان چار ٹویٹس کے بعد ٹوئٹر پر سونو نگم کا نام ٹرینڈ ہونا شروع ہو گیا۔ پاکستان کے دس سب سے زیادہ ٹرینڈ ہونے والے موضوعات میں سے ایک سونو نگم تھے جبکہ انڈیا میں بھی سونو اذان ڈیبیٹ کے ہیش ٹیگ سے بحث جاری تھی۔

اور ٹوئٹر پر ہر بحث کی طرح، ایک طرف وہ لوگ تھے جو سونو نگم کے حق میں تھے اور دوسری جانب وہ جو ان کی مخالفت کر ہے تھے یا ان کا مذاق اڑا رہے تھے۔

لیکن انڈیا سے سواپنیل نے اپنی دور اندیشی کا مظاہرہ کرتے ہوئے ٹویٹ کی کہ 'سونو نگم کی یہ ٹویٹس سارے دن خبروں میں رہیں گی اور میں اس بحث میں حصہ لینا نہیں چاہتا۔ میں جا رہا ہوں۔'

،تصویر کا ذریعہTwitter

دوسری جانب پاکستان سے عادل نے سونو نگم کے نام کے حوالے سے ٹویٹ کی 'سونو نگم سے سونو ناکام ایک ٹویٹ میں'۔

،تصویر کا ذریعہTwitter

دوسری جانب پاکستان سے ہی اسامہ نے اپنی ٹویٹ میں سونو نگم کی گلوکاری کو تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے ٹویٹ کی کہ 'کل میں شاپنگ مال گیا جہاں وہ سونو نگم کے گانے چلا رہے تھے۔ وہ سن کر میرے کانوں سے خون بہنا شروع ہو گیا۔ کب ختم ہو گی یہ زبردستی۔' اسامہ کی اس ٹویٹ کو کافی سراہا گیا اور ساڑھے چار سو سے زائد لوگوں نے اس کو دوبارہ شیئر بھی کیا۔

،تصویر کا ذریعہTwitter

ادھر انڈیا میں سونو نگم کی ٹویٹس کے بعد کئی ایسی ٹویٹس بھی دیکھنے میں آئیں جن میں سونو نگم کے بجائے بالی ووڈ کے اداکار سونو سُود کو مغالطے میں تنقید کا نشانہ بنایا گیا۔

انڈیا سے روپیش نے ٹویٹ کی 'سونو نگم کی ٹویٹ کے بعد سے لوگ سونو سُود کی فلموں کو ویب سائٹ آئی ایم ڈی بی پر درجہ بندی میں صرف ایک سٹار دے رہے ہیں۔ چلیں کوئی تو اچھا کام ہوا اس سے۔'

،تصویر کا ذریعہTwitter

اداکار سونو سُود خود کو سارا دن ملنے والی اس توجہ پر حیران تھے اور انھوں نے دوپہر میں ٹویٹ کر کے اپنی حیرانی کا اظہار کیا۔'میں ابھی بھی یہ سوچ رہا ہوں کہ کس نے کیا کہا اور کس کو کہا اور مجھ سے کون پوچھ رہا ہے کہ معلوم کرو کہ کہاں پر کیا ہوا ہے۔'

،تصویر کا ذریعہTwitter

البتہ سونو نگم کے کچھ چاہنے والوں نے ان کا دفاع کیا۔ انڈیا سے بھیاجی نے ٹویٹ کی 'آپ سونو نگم سے متفق ہوں یا نہ ہوں، ان کی گلوکاری کے بارے میں کوئی سوال نہیں کیا جا سکتا۔ کشور کمار کے بعد سب سے زیادہ ہمہ گیر گلوکار ہیں یہ۔'