پرینکا چوپڑا: سماجی تبدیلی صرف فلم انڈسٹری کی ذمہ داری نہیں

پرینکا چوپڑا تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images
Image caption پرینکا نے بالی وڈ کے بعد ہالی وڈ میں بھی کامیابی حاصل کی ہے

بالی وڈ اداکارہ پرینکا چوپڑا نے کہا ہے کہ سماج میں بیداری پیدا کرنے کی ساری ذمہ داری فلم انڈسٹری پر نہیں ڈالی جا سکتی ہے۔

انڈیا کی گلوبل آئیکون بذات خود سماج میں لڑکیوں کو بااختیار بنانے، اطفال کی تعلیم اور کم عمری کی شادی کے متعلق بیداری پیدا کرنے میں اہم کردار ادا کرتی رہی ہیں۔

پرینکا چوپڑا اداکارہ ہونے کے ساتھ اقوام متحدہ کے ادارے یونیسیف کی عالمی خیرسگالی کی سفیر بھی ہیں اور ایک فلم ساز بھی ہیں۔

سابق حسینۂ عالم نے کہا: 'فلم انڈسٹری کا بنیادی مقصد تفریح فراہم کرنا ہے۔ آپ فلمیں تفریح کے لیے بھی دیکھتے ہیں۔ یہ ضروری نہیں کہ ہر فلم میں کوئی پیغام ہو۔‘

ان کا کہنا تھا کہ ’اس کا تعلق افسانے اور کہانی سے ہے اور پورے ملک کی ذمہ داری صرف فلم انڈسٹری پر ڈالنا نا انصافی ہے۔ آپ مصوروں، ادیبوں اور شاعروں سے بیداری پھیلانے اور تبدیلی لانے کے لیے کیوں نہیں کہتے۔'

انڈین ایکسپریس کے مطابق انھوں نے کہا: 'ایک فلم ساز کے طور پر میں اپنی ہر فلم میں کہانی کہنے کی کوشش کرتی ہوں۔ اگر میری کہانی میں کوئی سماجی پیغام دینے کی گنجائش ہو گی تو ہم دیں گے لیکن ایوارڈ جیتنے کے لیے کسی مسئلے کا فائدہ نہیں اٹھائيں گے۔'

تصویر کے کاپی رائٹ Twitter/Priyanka Chopra
Image caption پرینکا چوپڑہ نے بچوں کی تعلیم اور انھیں بااختیار بنانے کے متعلق بیداری پیدا کرنے کے لیے شام کا دورہ کیا تھا

انھوں نے کہا کہ ان کے پروڈکش ہاؤس پرپل پیبل پکچرز کا سب سے بڑا مقصد نئے ٹیلنٹ کو موقع دینا ہے۔ ’میری فلم کے ہدایتکار، موسیقار اور اداکار نئے لوگ ہوتے ہیں کیونکہ ہم جب اس انڈسٹری میں آئے تھے تو ہمیں قدم رکھنے کی زیادہ جگہ نہیں تھی۔'

انھوں نے اپنے ان خیالات کا اظہار دہلی میں 'نوجوان لڑکیوں اور لڑکوں کو با اختیار بنانے کی ضرورت' پر بات کرتے ہوئے کیا۔

انھوں نے کہا کہ ہندوستان نوجوانوں کا ملک ہے اور یہ وقت کی ضرورت ہے کہ انھیں مستقبل کا باہنر اور مثبت کارکن بنانے پر سرمایہ کاری کی جائے۔

ان کا کہنا تھا کہ ہر فرد سماج کو بہتر بنانے میں اپنا کردار ادا کر سکتا ہے۔'

تصویر کے کاپی رائٹ Twitter/Priyanka Chopra
Image caption پرینکا چوپڑہ یونیسیف کی گلوبل خیرسگالی سفیر ہیں

پرینکا چوپڑا نے کہا: 'تبدیلی لانے کے لیے آپ کو امیر ہونے کی ضرورت نہیں۔ اس کے لیے ہمیشہ پیسے کی ضرورت نہیں۔ آپ اپنے تحمل اور جذبے سے بھی اپنا پیغام پھیلا سکتے ہیں۔

انھوں نے فلم انڈسٹری میں خواتین اور مردوں کی آمدن میں فرق پر بھی بات کی۔

انھوں نے کہا: 'یہ مسئلہ صرف فلمی صنعت میں نہیں، مرد بمقابلہ عورت ہر جگہ ہے۔ فلم انڈسٹری کی بات شہ سرخیوں میں ہوتی ہے کیونکہ لوگ اس کے بارے میں پڑھتے ہیں۔ لیکن ہر شعبے میں خواتین پیچھے ہیں۔'

تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images
Image caption پرینکا چوپڑہ نے یونیسیف کی عالمی خیرسگالی سفیروں کی ٹیم میں شمولیت کو باعث افتخار کہا تھا

پرینکا نے حسن کے معیار پر بھی بات کی اور کہا کہ سماج نے حسن کا معیار طے کیا ہے اور وہی فلم انڈسٹری میں بھی رائج ہے اگر سماج اپنے رویے میں تبدیلی لائے تو یہ تبدیلی فلم بزنس میں بھی نظر آئے گی۔

پرینکا گذشتہ روز بریلی انٹرنیشنل یونیورسٹی سے ڈاکٹریٹ کی اعزازی ڈگری لینے جانے والی تھیں لیکن کہرے کی وجہ سے وہ بہ نفس نفیس وہاں نہیں پہنچ سکین لیکن انھوں نے پروگرام میں از راہ مذاق خود کو ڈاکٹر پرینکا چوپڑا کہا۔

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں