ایسا پہلے بھی ہوا ہے

تصویر کے کاپی رائٹ AFP

کچھ تو بات تھی سری دیوی میں کہ ان کے چاہنے والوں کا ایک لشکر سوگوار ہے۔ نہ جانے کیوں فلمی ستاروں کو دیکھ کر ایسا لگتا نہیں کہ وہ بھی یوں اچانک عام انسانوں کی طرح مر سکتے ہیں۔

شاید اس لیے کہ پردے پر انجام کار ہر جنگ جو جیتتے ہیں۔

سری دیوی کی عمر 54 برس ضرور تھی لیکن ان کے چہرے پر کوئی جھری نہیں تھی اور جسم پر کہیں فیٹ کا نام و نشان نہیں تھا۔ ہو سکتا ہے کہ کئی دوسرے بڑے ستاروں کی طرح وہ بھی پلاسٹک سرجری کا سہارا لیتی ہوں، فلمی دنیا میں یہ کوئی غیرمعمولی بات نہیں ہے۔

بالی وڈ میں کم ہی فلم سٹار عمر کے ساتھ بوڑھے ہوتے ہوئے نظر آتے ہیں۔ عمر تو ان کی بھی بڑھتی ہوگی بس نظر نہیں آتی۔

یہ بھی پڑھیے

’سری دیوی کی موت حادثاتی طور پر ڈوبنے سے ہوئی‘

16 واں ساون سے مام تک

سری دیوی بالی وڈ کو غمزدہ کر گئیں

سری دیوی کی اداؤں نے لاکھوں نوجوانوں کے دل چرائے، لیکن معلوم نہیں کیوں جب بالی وڈ پر ان کا جادو چل رہا تھا تب بھی میں ان کی اداکاری کا زیادہ فین نہیں تھا۔

ان کی پرانی فلموں میں مجھے لمحے اور صدمہ پسند تھیں۔ میں نے ان کی آخری دو فلمیں مام (ماں) اور انگلش ونگلش دیکھی تھیں اور دونوں کو دیکھ کر مجھے لگا کہ اپنے کریئر کے دوسرے اوتار میں وہ زیادہ میچور ایکٹنگ کر رہی تھیں۔

لیکن میری ایک تمل دوست نے مجھ سے کہا کہ ’انھوں نے اپنا اصل ہنر تمل فلموں میں دکھایا، تمل فلموں میں وہ اداکارہ تھیں، اور بالی وڈ میں (صرف) سٹار! بالی وڈ نے ان کی اداکاری ختم کر دی تھی!‘

سری دیوی کے بارے میں تو آج بہت کچھ لکھا گیا ہے، لیکن ان کے اچانک انتقال کی خبر سن کر مجھے سمِتا پاٹل کی یاد آگئی۔

منتھن، آکروش، بازار اور ارتھ جیسی فلموں میں سمِتا پاٹل کی بے مثال اداکاری آج بھی شائقین کے دل و دماغ پر نقش ہو گی۔

سری دیوی کی طرح وہ بھی بے پناہ حسین تھیں، بس انداز بالکل جدا تھا۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP

لیکن دونوں وقت سے پہلے ہی دنیا سے رخصت ہوئیں۔

یہ اکتیس سال پہلے کی بات ہے، اتفاق ہی کہیے کہ اس وقت سمِتا پاٹل کی عمر بھی اکتیس سال ہی تھی۔ وہ دسمبر 1986 میں اپنے پہلے بچے کی پیدائش کے لیے ہسپتال میں داخل ہوئی تھیں لیکن دوبارہ کبھی گھر نہیں لوٹیں۔

راج ببر، جو اب کانگریس پارٹی کے لیڈر ہیں، اس وقت بالی وڈ کے بڑے ستاروں میں گنے جاتے تھے۔ سمِتا پاٹل ان کی دوسری بیوی تھیں اور پیرالل یا آرٹ سنیما اور تھئیٹر کی سُوپر سٹار سمجھی جاتی تھیں۔

وہ دور درشن پر خبریں پڑھتی تھیں کہ شیام بینیگل نے انھیں دیکھا اور یوں ان کی فلمی زندگی کا سفر شروع ہوا۔ سمِتا پاٹل کی اکثر فلموں کی کہانیاں عورتوں کی زندگی کے مختلف پہلوؤں کے ارد گرد ہی گھومتی تھیں (بھومیکا، مرچ مصالحہ، ارتھ، بازار۔۔۔) حالانکہ یہ وہ وقت تھا جب مین سٹریم سنیما میں ہیروئن صرف ہیرو کے ساتھ پیڑوں کے ارد گرد گانے گاتے ہوئے ہی نظر آتی تھیں۔

سری دیوی کی مام اور انگلش ونگلش بھی کچھ مختلف انداز کی فلمیں تھیں۔ مام میں انھوں نے ایک ایسی ماں کا کردار نبھایا ہے جو اپنی بیٹی کا ریپ کرنے والوں کو خود سزا دیتی ہے۔

اب جلدی ہی ان کی اپنی بیٹی کی پہلی فلم ریلیز ہونے والی ہے لیکن افسوس کہ سری دیوی وہاں نہیں ہوں گی۔

ان کے پاس بس اتنا ہی وقت تھا۔

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں