پیسوں کے عوض جنسی خدمات، مس وینزویلا کا مقابلہ ملتوی

مس وینیزویلا تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images
Image caption مس وینزویلا کا مقابلہ گذشتہ 40 برسوں سے منعقد ہو رہا ہے

لاطینی امریکی ملک وینزویلا میں منعقد ہونے والے مقابلہ حسن کو جنسی اور مالیاتی سکینڈل کے سامنے آنے کے بعد ملتوی کر دیا گیا ہے۔

مس وینزویلا کے ماضی میں منعقد ہونے والے مقابلوں کی شرکا نے دوسری شرکا پر الزام عائد کیا ہے کہ وہ جنسی خدمات کے عوض کاروباری شخصیات اور سرکاری حکام سے رقم وصول کرتی ہیں۔

ان الزامات کے بعد سماجی رابطوں کی ویب سائٹ پر طوفان اٹھ کھڑا ہوا اور اب اس کے بعد مقابلہ ملتوی کر دیا گیا ہے اور منتظمین نے دعووں کی تحقیقات کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔

یہ تنازع اس وقت پیدا ہوا جب گذشتہ برس تیل کی سرکاری کمپنی کے خلاف بدعنوانی کی تحقیقات کا آغاز ہوا اور اس میں متعدد افراد کو حراست میں لیا گیا۔

اس پر مس وینزویلا کے مقابلے میں حصہ لینے والی حسیناؤں نے الزام عائد کیا کہ اس مقابلے میں شرکت کرنے والی بعض خواتین نے سرکاری سطح پر ہونے والی کرپشن سے فائدہ اٹھایا تھا۔

سوشل میڈیا اور مقامی میڈیا پر ان الزامات کے جواب میں وینزویلا آرگنائزیشن نے کہا ہے کہ جو بھی اس ایونٹ کے اصول و ضبوابط کی خلاف ورزی میں ملوث ہے اس کے بارے میں تحقیقات تک آڈیشن ملتوی کر دیے گئے ہیں۔ کیراکس جہاں مقابلہ حسن میں شامل ہونے والے امیدوار تربیت لیتے ہیں کو بھی بند کر دیا گیا ہے۔

وینزویلا کی آبادی فقط تین کروڑ 20 لاکھ ہے اور وہ اس کا شمار دنیا کی اُن ممالک میں ہوتا ہے جہاں مہنگائی عروج پر ہے۔ یہ بین الاقوامی سطح پر ہونے والے مقابلہ حسن میں حصہ لینے والے کامیاب ممالک میں شامل ہے۔

خیال رہے کہ اب تک وینز ویلا نے سات مرتبہ مِس یونیورس کے مقابلے میں حصہ لیا جبکہ چھ میں کامیابی حاصل کی۔

اسی بارے میں