برطانوی فوٹو گرافر باغیچوں کی تصاویر کے سالانہ مقابلے کی فاتح قرار

برطانوی فوٹو گرافر جل ویلہم رواں برس انٹرنیشل گارڈن فوٹو گرافر آف دی ائیر کمپیٹیشن، یعنی باغیچوں کی تصاویر بنانے والے فوٹو گرافروں کے سالانہ مقابلے کی فاتح قرار پائی ہیں۔

شمالی یاک شائر سے تعلق رکھنے والی فوٹو گرافر نے 50 ممالک کے 19 ہزار لوگوں کو شکست دے کر پچھتر سو برطانوی پاؤنڈ کا اول انعام حاصل کیا۔ انکی تصویر کا عنوان ’فائر ورک‘ یعنی آتش بازی ہے۔

اس تصویر میں انھوں نے اپنے باغیچے میں لگے الیئیم نامی پھول کے اوپری حصوں کو دیکھایا ہے۔

ولیہم نے یہ تصویر فوٹو گرام پرنٹنگ کی تکنیک کے تحت بنائی ہے۔ یہ مختلف مواد جیسا کہ امونیم سائٹریٹ اور پوٹاشیئم فیری سائی نائیڈ کے آمیزے سے تیار کی گئی اور بعد میں اس کو واٹر کلر کاغذ پر پینٹ کیا گیا اور سوکھنے کے لیے رکھ دیا گیا۔

ان کا کہنا تھا اس کے نتیجے میں سامنے آنے والے شاہکار اپنی مثال آپ ہیں جس میں نباتات کو مختلف انداز میں پینٹنگ کی شکل میں پیش کیا گیا ہے۔

’ہر فن پارہ میرے اپنے باغیچے کے پودوں اور پھولوں پر مشتمل ہے اور انھیں شمالی یارک شائر کے سورج کی روشنی رکھا گیا۔‘

ہم یہاں اس مقابلے میں شریک 13 دیگر فوٹو گرافرز کی مخلتف کیٹیگریز میں شامل تصاویر پر نگاہ ڈالیں گے۔

’بیوٹی فل گارڈنز‘ کی فاتح تصویر: رچرڈ بلوم کی تصویر ’بریزنگم گارڈنز ان آٹم‘ نارفولک، انگلینڈ، برطانیہ

’شاندار صبح نے بریزنگم میں سمر گارڈن کو اپنی تیز اور گرم روشنی سے بھر دیا ہے۔ زیبائشی گھاس ایسٹرینڈ روڈبیکیا کے جھنڈ کے ساتھ دیکھائی گئی ہے۔‘ ۔رچرڈ بلوم

’بریتھنگ سپیس‘ کے فاتح: اینڈریا پوزی کی تصویر ’فیرویل‘ ٹوریس ڈیل پینی نیشنل پارک، پاٹاگونیا، چلی

’سورج نکل چکا ہے اور صبح لاجواب ہے۔ سبزے سے گزرتے ہوئے مجھے احساس ہوا اس جگہ کی اصلیت اس لمحے اپنے آپ کو ظاہر کر رہی ہے۔‘

’طوع آفتاب کے غیر معمولی رنگ تحلیل ہو چکے ہیں اور کرہ ارض کے سب سے خوبصورت پہاڑی سلسلوں میں سے ایک کی خوبصورتی کو اجاگر کرتے ہوئے ایک عجیب سا احساس ابھر رہا ہے۔‘ اینڈریا پوزی

’کیپچرڈ ایٹ کیو‘ کی فاتح: ویسنزو ڈی نوزو کی تصویر ’لاسٹ ان لش بیوٹی‘۔ رائل بوٹانک گارڈن، کیو، لندن، انگلینڈ، برطانیہ

’کیو میں واقع پام ہاؤس کے در وا ہوتے ہیں اور یوں گمان ہوتا ہے کہ آپ بہشت میں داخل ہو رہے ہیں۔ یہ نظارہ ہمیشہ مجھے دم بخود کر دیتا ہے۔ اس محسور کن قدرتی حسن کی موجودگی مجھے ورطہ حیرت میں ڈال دیتی ہے۔‘

’یہ تصویر میں نے اس وقت کمیرے کی آنکھ میں محفوظ کی جب میری ایک دوست سرسبز اور گھنے پودوں کے بیچ اس ہی طرح کی کیفیت سے گزر رہی تھی۔‘ وینسینزو ڈی نوزو

’گرینگ دی سٹی‘ کی فاتح: ہالو چاؤ کی تصویر ’گرین بیلٹ‘۔ کولون، ہانگ کانگ، چین

’میں نے تصویر کشی کی ایک تیکنیک کا سہارا لیا ہے تاکہ شہر میں نباتاتی زندگی کی موجودگی کو واضح کر سکوں، یہ دیکھا سکوں کہ ان کی موجودگی اور قربت کس حد تک ہے ۔ اس یگانگت اور تعلق کی اہمیت کو آسانی سے بھلایا جا سکتا ہے۔‘ ہالو چاؤ

’دی بیوٹی آف پلانٹس‘ کی فاتح: کیتھلین فورے کی تصویر ’لوٹس ٹینگو‘۔ کینلورتھ پارک اینڈ ایکواٹک گارڈنز، واشنگٹن ڈی سی، امریکہ

’ایکواٹک گارڈن میں کنول کا پھول مکمل کھلنے تک جن مراحل سے گزرتا ہے ان کی تصاویر نمائش کے لیے پیش کی گئی ہیں۔ لیکن نیلمبو نیوسیفرا کی دو بل کھاتی اور محوِ رقصاں کونپلوں کو دیکھنا غیر متوقع اور سحر انگیز تھا۔‘ کیتھلین فورے

’دی باؤنٹی فل ارتھ‘ کی فاتح: سووندی چندرا کی تصویر ’کلرفل فیلڈز‘ سمبالن لاوانگ، لومبوک، انڈونیشیا

’طوع آفتاب کا نظارہ کرنے کے لیے میں علی الصبح پرگاسنگن پہاڑ کی چوٹی پر پہنچا۔ نظارہ شاندار تھا کیونکہ اس کے بالمقابل پہاڑیاں تھیں اور نیچے کی جانب سیمبالن گاؤں۔‘

یہاں بہت سے لوگ کاشتکار ہیں اسی لیے انھوں نے اس وادی کی زمین کو چاول، سبزیاں اور یہاں تک کہ سٹرابری کی کاشتکاری کے لیے مختلف قطعات میں تقسیم کر دیا ہے۔‘ سووندی چندرا

’دی سپیرٹ آف ٹراوٹمینزڈورف‘ کی فاتح: ہیری ٹرمپ کی تصویر ’ویو اوور ٹراوٹمینزڈورف‘ ساؤتھ ٹائرول، اٹلی

یہ خصوصی ایوارڈ ہے جو کہ اٹلی کے علاقے میرانو کے گارڈنز آف ٹراوٹمینزڈورف کیسل کے لیے مختص ہے۔

اس ایوارڈ کو جیتنے والے ہیری ٹرمپ کہتے ہیں ’دن کا سب سے روشن وقت ہوا چاہتا تھا جب میں نے اکتوبر میں ٹراوٹمینزڈورف کے اس منظر کی تصویر کشی کی، پت جھڑ زدہ درخت اپنی ہریالی خزاں کی نظر کیے چاہتے تھے۔‘

’ٹریز، وڈز اینڈ فارسٹ‘ کی فاتح: روبرٹو مارچگیانی کی تصویر ’مسٹی بائیو‘ ایٹچافلایا بیسن، لوزیانا، امریکہ

لوزینا کا دلدلی علاقہ نہروں، دلدلوں، پام کے جنگلات اور سائپرس کے درختوں پر مشتمل ایک بڑا اور گنجان قطعہ ارض ہے جو کہ عظیم الشان مسیسپی کے دہانے کے قرب میں واقع ہے۔

’اس میں انواع و اقسام کے سانپ، مگرمچھ، پرندے اور زہریلی مکڑیاں پائی جاتی ہیں، تاہم یہ عومی ضرر رساں ماحول اپنے اندر خیرہ کر دینے والی خوبصورتی کی صلاحیت رکھتا ہے۔‘ روبرٹو مارچگیانی

’وائلڈ فلاور لینڈسکیپ‘ کی فاتح: روبرٹ گبسن کی تصویر ’ماؤنٹ رینر ان دی مسٹ‘ ماؤنٹ رینر نیشنل پارک، واشنگٹن، امریکہ

’مجھے مازاما رج پر قابل دید اور قطار اندر قطار موسمِ گرما میں کھلنے والے الپائن کے پھول بشمول کیسٹیلیجا اور لوپینوسنڈ اینیمون نظر آئے، ان کی بناوٹ منظر میں اس طرح رنگ بھر رہی تھی جیسا کہ یہ سب ایک تدبیر کے تحت ہو۔‘ روبرٹ گبسن

’وائلڈ لائف ان دی گارڈن‘ کی فاتح: جوناتھن نیڈ کی تصویر ’سٹارلنگز‘ سنوڈونیا نیشنل پارک، ویلز، برطانیہ

شدید برف باری بہت سے بھوکے پرندوں کو میرے باغیچے میں لگے کھانے کے برتن تک کھینچ لائی۔

’کھانے کی باری آنے سے پہلے قریب میں واقع نل نے تین سٹارلنگز (پرندوں) کو سستانے کے لیے آرام دہ جگہ فراہم کی ہے۔‘ جوناتھن نیڈ

’یورپین گارڈن فوٹو گرافی ایوارڈ‘ کی فاتح: سکاٹ سمپسن کی تصویر ’کارک آک گیزبو‘ سمپسن، کیڈز، انڈالوسیا، سپین

بلوط کے درخت اور باقاعدہ تراش خراش، یورپ میں ایسے باغیچے بہت زیادہ تعداد میں نہیں ہوں گے جہاں یہ دونوں چیزیں یکجا ہوں۔

’مجھے انڈالوسیا میں واقع پرتعیش جائیداد میں اس طرح کی جگہ کی تصویر بنانے کا کہا گیا تھا۔ اس باغیچے کی اضافی خوبی نمایاں نظر آنے والی بالکونی ہے جو کہ پختہ بلوط کے درختوں کے درمیان بنائی گئی ہے۔‘ سکاٹ سمپسن

’ینگ گارڈن فوٹو گرافر آف دی ائیر‘ کی فاتح: جیک نیل کی تصویر ’لیڈیز آف دی کنیل‘ ولٹ شائر، انگلینڈ، برطانیہ

ویلٹ شائر کے سبزہ زار میں ابھرتے ہوئے سورج کی روشنی لیڈی سموک کے جھنڈ سے چھن کر سامنے آ رہی ہے۔

’میں نے عدسے کی مدد سے پانی کے قطروں کو خوبصورت پسِ منظر میں بدل دیا ہے اور ایک صاف، ہموار اور جھلملاتا ہوا منظر پیش کیا ہے۔‘ جیک نیل

’پورٹ فولیوز، ایبسٹریکٹ ویوز‘ کی فاتح: جوسیلن ہارسفال کی تصویر ’ٹراپیکل ونڈرلینڈ‘ رائل بوٹانک گارڈنز، کیو، لندن، انگلینڈ، برطانیہ

کیو گارڈن میں پام ہاؤس کے بھید اور انجانے تجسس کے اظہار کا بہترین ذریعہ جادوئی اور خواب جیسے اثر رکھنے والی انفراریڈ کی بہترین تیکنیک کا استعمال تھا۔

’میں نے مختلف چنیدہ پودوں اور درختوں کے پتوں کو اس تصویر کا حصہ بنایا ہے تاکہ رنگوں اور بناوٹوں کی کی لطیف قسموں کو اس ٹراپیکل باغ میں دیکھایا جا سکے۔‘ جوسیلن ہارسفال

ہم نے چند اور تصاویر، جو کے فائنل میں شامل تھیں، بھی اس گیلری میں شامل کی ہیں۔

’کمنڈڈ ان دی وائلڈ لائف‘ کیٹگری میں شامل ایک تصویر: اینڈیو پیٹرز کی تصویر ’دی بمبلیبی‘ شروپ شائر، انگلینڈ، برطانیہ

’دی باؤنٹی فل آرتھ‘ کیٹگری میں شامل ایک تصویر: گلوریا کنگ کی تصویر ’لانگجی رائس ٹیرسس‘ لانگشینگ، گوانزی صوبہ، چین

’ایبسٹریکٹ ویوز‘ کیٹگری کے فائنل مقابوں میں شامل تصویر:

ڈیانا انگلش کی تصویر ’آئیسڈ نیجیلا‘ کلبن بے، نیو ساؤتھ ویلز، آسٹریلیا

’کیپچرڈ ایٹ کیو‘ کیٹگری میں شامل ایک تصویر:

جیمز یاٹیز کی تصویر ’اے سٹارم از بروانگ‘ رائل بوٹانک گارڈنز، کیو، لندن، انگلینڈ، برطانیہ

’دی بیوٹی آف پلانٹس‘ کیٹگری میں تعریف کی گئی ایک تصویر:

انیٹے لیپل کی تصویر ’ڈانسنگ پیٹلز‘ اویرون، فرانس

’بریدنگ سپیسز‘ کیٹگری میں تیسرے نمبر پر آنے والی تصویر:

سویندی چندرا کی تصویر ’ٹمپاک سیو واٹر فال‘ لوماجنگ، ایسٹ جاوا، انڈونیشیا

’ٹریز، وڈز اینڈ فارسٹس‘ کیٹگری میں شامل تصویر:

پال مرسیلینی کی تصویر ’آٹمز ایمرلڈ، چیپولا ریور، فلوریڈا، امریکہ

’گرینگ دی سٹی‘ کیٹگری کی فائنلسٹ تصویر:

یان ایورل کی تصویر ’ایفہیمرل گارڈن‘ بولونگ سر مر، فرانس

’بیوٹی فل گارڈنز‘ کیٹگری میں شامل تصویر:

جوناتھن ایونز کی تصویر ’کفٹن کورٹ‘ نیشنل ٹرسٹ کفٹن کورٹ، ایلسیسٹر، انگلینڈ، برطانیہ

’بریدنگ سپیسز‘ کیٹگری میں شامل تصویر:

بل کوسٹر کی تصویر ’فشرمین آن دی لی ریور‘ چین

.