نیومی جنگی جرائم کی عدالت میں پیش ہوں گی

نیومی کیمپبیل
Image caption نیومی کیمپبیل انتیس جولائی کو عدالت کے سامنے پیش ہوں گی

سپر ماڈل نیومی کیمپبیل نے تصدیق کی ہے کہ وہ لائبیریا کے سابق صدر چارلس ٹیلر کے خلاف جنگی جرائم کی عدالت میں گواہی دیں گی۔

چارلس ٹیلر کے خلاف دی ہیگ میں جنگی جرائم کی عدالت میں سیئیرا لیون میں فسادات کرانے میں ہیروں سے ہوئی آمدن کو استعمال کرنے کے حوالے سے مقدمہ چل رہا ہے۔ ان فسادات میں لاکھوں افراد ہلاک ہوئے تھے۔

سپر ماڈل کی استغاثہ نے گواہی دینے کے لیے اس لیے بلایا ہے کہ اطلاعات کے مطابق ان کو چارلس نے انیس سو ستانوے میں ہیرے دیے تھے۔

نیومی کیمپبیل انتیس جولائی کو عدالت کے سامنے پیش ہوں گی۔

نیومی کی ترجمان کا کہنا ہے ’وے ایک گواہ ہیں جن کو انیس سو ستانوے کے واقعات کے حوالے سے بلایا گیا ہے۔ اور کیمپیل نے کہا ہے کہ وہ قانون کی مدد کریں گی۔‘

ان کی ترجمان نے مزید کہا ’کسی بھی شک کو دور کرنے کے لیے میں یہ بتا دوں کہ کیمپبیل پر کوئی الزام نہیں ہے اور ان پر کوئئ مقدمہ نہیں چل رہا۔‘

استغاثہ یہ جاننا چاہتی ہے کہ آیا ٹیلر نے کیمپبیل کو ہیرے نیلسن منڈیلا کی جانب سے جنوبی افریقہ میں دی گئی دعوت پر دیے تھے۔

امریکی پروگرام اوپرا ونفری شو میں کیمپبیل نے ہیرے دیے جانے کی نہ تو تصدیق کی اور نہ ہی تردید۔ ’میں اس شخص کے مقدمے میں ملوث نہیں ہونا چاہتی۔ اس شخص نے گھناؤنے جرائم کیے ہیں اور میں نہیں چاہتی کہ میں اپنے خاندان کی جان خطرے میں ڈالوں۔‘

ممکن ہے کہ امریکی اداکارہ میا فیرو جن کو کیمپبیل نے ہیروں کے بارے میں بتایا تھا وہ بھی عدالت میں گواہی دیں۔

ٹیلر نے اپنے آپ پر لگے گیارہ الزامات کی تردید کی ہے۔