برٹنی سپئرز پر جنسی ہراس کا مقدمہ

برٹنی سپئرز
Image caption فرنینڈو فلورس نے گلوکارہ پر الزام لگایا ہے کہ وہ ان کے سامنے برہنہ پھرتی تھیں اور جنسی عمل کیا کرتی تھیں۔

مقبول پاپ سٹار برٹنی سپئرز کے ایک سابق باڈی گارڈ نے ان پر جنسی ہراس کا مقدمہ دائر کیا ہے۔

فرنینڈو فلورس نے گلوکارہ پر الزام لگایا ہے کہ وہ ان کے سامنے برہنہ پھرتی تھیں اور جنسی عمل کیا کرتی تھیں۔

سابق گارڈ نے یہ الزام بھی لگایا ہے کہ برٹنی سپئرز نے اپنے بچوں کی موجودگی میں اپنے بوائے فرینڈ سے پُر تشدد جھگڑے کر کے انھیں جذباتی پریشانی میں مبتلا کیا۔

گلوکارہ کے وکیل نے اس پر کوئی تبصرہ نہیں کیا لیکن ان کے سابق شوہر کے وکیل کیون فیڈرلِن کا کہنا ہے کہ مقدمہ ’بے بنیاد‘ ہے۔

لاس اینجلس کی ایک اعلیٰ عدالت میں داخل کیے جانے والے کاغذات کے مطابق فلورس نے الزام لگایا ہے کہ سپئرز نے بارہا اپنے برہنہ جسم کی نمائش کے لیے انھیں اپنے کمرے میں بلایا اور غیر ضروری جنسی طور پر اکسانے کی کوشش کی۔

انھوں نے یہ دعویٰ بھی کیا ہے کہ انھوں نے گلوکارہ کو اپنے چھوٹے بیٹے کو اپنی بیلٹ سے سزا دیتے اور ان کے سامنے نامناسب برتاؤ کرتے ہوئے بھی دیکھا۔

بہرطور فلورس کے وکیل مارک ونسنٹ نے ایسوسی ایٹڈ پریس سے بات کرتے ہوئے کہا ہے کہ الزامات داخل کیے جانے سے پہلے ان کا جائزہ لیا گیا تھا اور کسی اقدام کی ضرورت محسوس نہیں کی گئی۔

ان کا کہنا تھا کہ ان کے موکل سابق جوڑے کے بچوں کے حوالے سے نامناسب برتاؤ اور غلط کاری کے الزامات کے بارے میں سنجیدہ ہیں۔

ان کا کہنا ہے کہ ’وہ مطمئن ہیں کہ الزامات معاشی محرکات کا نتیجہ ہیں اور اسی قدر بے بنیاد ہیں جتنے کہ دکھائی دیتے ہیں‘۔

اسی سال فروری سے جولائی کے درمیان برٹنی سپئرز کے محافظ کے فرائص انجام دینے والے مسٹر فلورس نے اس سکیورٹی ایجنسی پر بھی الزام لگایا ہے کہ جس کے تحت وہ کام کرتے تھے کہ ایجنسی نے گلوکارہ کے بارے میں ان کی جانب سے کی جانے والی شکایات کو نظر انداز کیا۔

اسی بارے میں