اوڈری ہیپبرن کی نایاب ٹکٹ نیلام

اوڈری ہیپبرن
Image caption 2001 میں جرمنی کی پوسٹل سروس نے اوڈری ہیپبرن کے فوٹو والے ڈاک ٹکٹ شائع کیے تھے

برطانوی اداکارہ اوڈری ہیپبرن کی وفات کے بیس برس بعد ان کی فوٹو والے 10 نایاب ڈاک ٹکٹ تین لاکھ اسی ہزار پاؤنڈ میں نیلام ہوئے ہیں۔

نیلامی کا مقصد غریب بچوں کی تعلیم میں مدد کرنا ہے۔

سنہ 2001 میں جرمنڈاک سروس نے 14 ملین ڈاک ٹکٹ بنائے تھے جن پر ان کی فلم بریکفاسٹ کے فوٹو کو چھاپے گئے تھے۔

اس فوٹو میں ہیپبرن کو سگریٹ پیتے دکھایا گیا ہے۔

لیکن ہیپبرن کے بیٹے شون فیریر نے اس فوٹو کے کاپی رائٹ ڈاک سروس کو دینے سے انکار کردیا تھا۔ ان کا کہنا تھا کہ فوٹو میں تبدیلی کی گئی ہے۔ ان کے اس فیصلے کے بعد بیشتر ٹکٹوں کو جلادیا گیا تھا۔

فیریر نے ان ڈاک ٹکٹوں کو خیراتی مقصد کے لیے نیلام کرنے کا فیصلہ کیا۔

نیلامی سے حاصل کی جانے والی رقم کا دو تہائی حصہ اوڈری ہیپبرن چلڈرن فنڈز نامی تنظيم کو جائے گا جو سب سہارا افریقہ میں بچوں کو تعلیم مہیا کرانے کا کام کرتی ہے جبکہ ایک تہائی حصہ یونیسیف کو جائے گا۔

مسٹر فیریر کا کہنا تھا ’مجھے اس بات کی بے حد خوشی ہے کہ جو چیز ہمارے پاس تھی وہ پوری دنیا میں ضرورت مند بچوں کے لیے مددگار ثابت ہوگی۔‘

جرمن ڈاک سروس نے ڈاک ٹکٹ چھپوانے کے بعد مسٹر فیریر سے فوٹو شائع کرنے کی اجازت کے لیے رابطہ کیا تھا۔

مسٹر فیریر کا کہنا تھا ’اصل فوٹو میں ہیپبرن کے منہ میں سگریٹ ہے اور انہوں نے کالا چشمہ لگایا ہوا تھا۔ لیکن ڈاک سروس نے فوٹو میں تبدیلی کرتے ہوئے چشمے کی جگہ سگرٹ ہولڈر کو دکھایا ہے۔‘

فیریر نے ڈاک سروس سے کہا کہ یا تو وہ اصل فوٹو دکھائیں یا کوئی اور تصویر شائع کریں۔ لیکن ڈاک سروس نے جلدبازی میں فلم کی کوئی اور فوٹو لگادی اور ان ڈاک ٹکٹوں کو جلانے کا حکم دے دیا۔

ان ٹکٹوں کی ڈو شیٹس بچا لی گئی تھیں جن میں ایک پوسٹل سروس آرکائیو اور دوسری جرمن پورٹ میوزیم کے پاس تھی۔ لیکن دو اور اضافی شیٹس تھیں جو غائب ہوگئی تھیں۔

اسی بارے میں