کنّڑ اداکار درشن ضمانت پر رہا

درشن تصویر کے کاپی رائٹ BBC World Service
Image caption درشن کنّڑ فلموں کے مقبول ترین اداکار ہیں

کنّڑفلم کے مقبول اداکار درشن کو جنوبی ہندوستان کی ایک عدالت نے ضمانت پر رہا کردیا ہے۔ درشن پر انکی اہلیہ وجیا لکشمی کے ساتھ بد سلوکی کا الزام تھا۔

درشن کے مداحوں نے کرناٹک ہائی کورٹ کے اس فیصلے کا خیرمقدم کیا ہے اور اس موقع پر مٹھائی تقسیم کی اور جشن منایا۔

درشن کو نو ستمبر کو گرفتار کیا گیا تھا۔ انکی اہلیہ نے ان پر گھریلو تشدد کا الزام لگایا تھا۔

پولیس کا کہنا ہے کہ کنّڑ فلم انڈسٹری کی جانب سے وجیا لکشمی پر دباؤ ڈالا گیا ہے جس کے بعد انہوں نے اپنی شکایت واپس لے لی۔

مقامی عدالت کی جانب سے درشن کو ضمانت پر رہا کیے جانے کی درخواست مسترد کردی گئی تھی جس کے بعد درشن نے ہائی کورٹ کا رخ کیا تھا۔

ہائی کورٹ ججز نے درشن اور انکی اہلیہ کو تیرہ ستمبر کو عدالت کے سامنے پیش ہونے کے لیے کہا تھا۔

پولیس نے درشن پر اپنی اہلیہ کے ساتھ تشدد اور قتل کرنے کی کوشش کا مقدمہ دائر کیا تھا۔

درشن کی اہلیہ نے درشن پر مارپیٹ کرنے اور بندوق سے مارنے کی دھمکی کا الزام عائد کیا تھا۔

درشن کی گرفتاری کے بعد ان کے مداحوں نے بنگلور شہر میں احتجاج بھی کیا تھا جنہیں منتشر کرنے کے لیے پولیس کو کارروائی کرنی پڑی تھی۔

درشن جنوبی ہند میں مقامی زبانوں کے مقبول و معروف ایکشن ہیرو ہیں۔

اطلاعات کے مطابق درشن اور انکی اہلیہ کے درمیان درشن کی ساتھی اداکارہ نیکتا ٹھکرال کے ساتھ انکے مبینہ تعلقات کے سلسلے میں جھگڑا ہوا تھا۔ حالانکہ نیکتا ٹھکڑال نے درشن کے ساتھ پیشہ وارانہ رشتوں کے علاوہ کسی بھی طرح کے تعلقات سے انکار کیا تھا۔

اس معاملے کے سامنے آنے کے بعد کنّڑ فلم پروڈیوسرز اسیوسی ایشن نے نیکتا ٹھکرال پر کنّڑ فلموں میں کام کرنے پر آئندہ تین برس تک کے لیے پابندی عائد کردی تھی۔ حالانکہ بعد میں پابندی کا یہ فیصلہ واپس لےلیاگیا تھا۔

یہ پابندی یہ کہہ کر عائد کی گئی تھی کہ محترمہ ٹھکرال نے’اپنے ساتھی اداکار کی گھریلو زندگی کا سکون تباہ کردیا ہے۔‘

فلمی صعنت میں موجود حزب اختلاف نے پروڈیوسرز کو قائل کیا تھا کہ وہ اپنے فیصلے کو واپس لیں۔

نکیتا ٹھکرال کئی تیلگو، تمل اور کنّڑ فلموں میں اداکاری کرچکی ہیں اور وہ درشن کے ساتھ کسی بھی طرح کے رومانٹک تعلقات سے انکار کرتی رہی ہیں۔

ان کا کہنا تھا’ ہمارے درمیان پیشہ وارنہ رشتوں کے سوا کچھ بھی نہیں ہے۔ اگر درشن کو ان کی بیوی سے کوئی مسئلہ ہے تو میں اس کے لیے کیسے ذمہ دار ہوں۔‘

ایسوسی ایشن کے کئی ارکان اور بعض خواتین تنظیموں نے اس طرح کی پابندی پر سخت نکتہ چینی کرتے ہوئے کہا تھا کہ اس کے لیے ایک عورت کو نشانہ بنانا درست نہیں ہے۔

اسی بارے میں