میڈلین ملر کے لیے اورنج فکشن ایوارڈ

تصویر کے کاپی رائٹ BBC World Service
Image caption یہ لگاتار چوتھا موقع ہے کہ کسی امریکی مصنفہ نے یہ انعام جیتا ہے

امریکی مصنفہ میڈلین ملر نے اپنے پہلے ہی ناول ’سونگ آف ایکیلز‘ کے لیے دو ہزار بارہ کا اورنج فکشن ایوارڈ جیت لیا ہے۔

یہ ناول یونانی دور کے ہم جنس رومان کے بارے میں ہے اور اسے پہلی مرتبہ ستمبر دو ہزار گیارہ میں بلومز بری نے شائع کیا تھا۔

ایوارڈ کا فیصلہ کرنے والے منصفین کے پینل کی سربراہ جوانا ٹرولوپ کا کہنا ہے کہ یہ ناول واقعی انعام کا حقدار تھا اور ’ہومر اگر آج ہوتا تو میڈلین پر فخر کرتا‘۔

یہ لگاتار چوتھا موقع ہے کہ کسی امریکی مصنفہ نے یہ انعام جیتا ہے۔ ایوارڈ کے لیے ان کا مقابلہ این پیشٹ، ایسی ایڈگیان، این انرائٹ جارجینا ہارڈنگ اور سنتھیا اوزک سے تھا۔

ملر نے بدھ کی شام لندن کے رائل فیسٹیول ہال میں ہونے والی تقریب میں اپنا ایوارڈ وصول کیا۔

تیس ہزار پاؤنڈ کا اورنج پرائز فار فکشن انگریزی ادب میں خواتین لکھاریوں کے لیے مخصوص ہے۔

یہ آخری سال ہے کہ اس ایوارڈ کو اورنج ایوارڈ کہا گیا ہے کیونکہ اس کی سپانسر موبائل کمپنی نے اس ایوارڈ کے ساتھ اپنی سترہ سالہ رفاقت ختم کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔

اسی بارے میں