صحافی سلیم عاصمی کی کتاب کی رونمائی

تصویر کے کاپی رائٹ BBC World Service
Image caption سلیم عاصمی کی کتاب، اخبارات اور رسائل میں شائع ہونے والے ان کے مضامین، انٹرویوز اور ریویوز پر مشتمل ہے۔

سینئیر صحافی سلیم عاصمی کی کتاب کی رونمائی کا اہتمام سنیچر کو کراچی میں کیا گیا اور انہیں لائف ٹائم ایچیومنٹ ایوارڈ بھی پیش کیا گیا۔

ان کے اعزاز میں اس تقریب کا اہتمام کراچی پریس کلب میں کیا گیا جہاں ان کے چاہنے والوں کی خاصی تعداد نے شرکت کی۔

دشتِ صحافت میں طویل سفر طے کرنے کے بعد سلیم عاصمی انگریزی روزنامہ ڈان کے ایڈیٹر کی حیثیت سے ریٹائر ہوئے۔ وہ دو بار کراچی پریس کلب کے صدر بھی رہے۔ ان کی کتاب کی رونمائی کے موقع پر کراچی پریس کلب نے انہیں لائف ٹائم ایچیومنٹ ایوارڈ بھی دیا۔

اس موقع پر مقررین نے ان کی زندگی کے کئی پہلوؤں کو اجاگر کیا اور ان کی شخصیت میں پنہاں کئی خصوصیات کو عیاں کیا۔

اپنی عمر اور علالت کے باعث انہیں وہیل چیئر پر سٹیج تک لایا گیا جہاں ان کے ساتھ ڈان کے موجودہ ایڈیٹر ظفر عباس، صحافی آئی اے رحمان، کراچی پریس کلب کے صدر طاہر حسن خان، اور دیگر موجود تھے۔

انتہائی کم گو اور پُرشکوہ شخصیت کے حامل سلیم عاصمی نے اپنی مختصر گفتگو میں کسرِ نفسی سے کام لیتے ہوئے کہا کہ ان کی زندگی کے جن پہلوؤں کو اجاگر کیا گیا اور ان کی جو خصوصیات گِنوائی گئیں، ان میں سے چند کا تو خود اُن کو بھی علم نہیں تھا۔

سلیم عاصمی کی کتاب، اخبارات اور رسائل میں شائع ہونے والے ان کے مضامین، انٹرویوز اور ریویوز پر مشتمل ہے جس کی تدوین ایس ایم شاہد نے کی ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ BBC World Service
Image caption تقریب کا اہتمام کراچی پریس کلب میں کیا گیا جہاں ان کے چاہنے والوں کی خاصی تعداد نے شرکت کی۔

ایس ایم شاہد نے اس موقع پر کہا کہ انہوں نے سلیم عاصمی کو بمشکل راضی کیا کہ وہ اپنے منتخب مضامین کو کتابی شکل دیں تاہم انہوں نے کافی پس و پیش سے کام لیا۔

ایس ایم شاہد نے کہا کہ شروع میں سلیم عاصمی نے اس خیال کو رد کرتے ہوئے کہا کہ رات گئی بات گئی، اب اسے شائع کرنے سے کیا حاصل۔

تاہم انہوں نے کہا کہ سلیم عاصمی کو منانے کی کوششیں جاری رہیں یہاں تک کہ انہوں نے کہا کہ ’جو کرنا ہے کرو۔‘

پچاس برس پر محیط اپنی رفاقت کا تذکرہ کرتے ہوئے صحافی آئی اے رحمان نے کہا کہ سلیم عاصمی انتہائی کم گو واقع ہوئے ہیں اور وہ اپنے بارے میں بھی بہت کم ہی بتاتے ہیں۔

ان کے ساتھ کام کرنے والے رفقاء میں ڈان کے سینئیر صحافی محمد علی صدیقی نے کہا کہ انہوں نے تین بہترین نیوز ایڈیٹر دیکھے ہیں جن میں سلیم عاصمی بھی شامل ہیں۔

اس تقریب کی کمپیئرنگ صحافی بابر ایاز نے کی۔ اس تقریب میں سلیم عاصمی کی کتاب رعایتی قیمت پر دستیاب تھی۔

اسی بارے میں