’بہتر سکرپٹ کے بغیر اچھی اداکاری نہیں‘

نصیرالدین شاہ تصویر کے کاپی رائٹ pr
Image caption نصیرالدین شاہ بالی ووڈ میں متوازی سینما کے بہترین اور مقبول ترین اداکاروں میں شامل ہیں۔

بالی ووڈ کے معروف اداکار نصیر الدین شاہ نے ایک بار پھر اچھے سکرپٹ کو فلموں کی کامیابی کا ضامن بتایا ہے۔

ان کے مطابق بالی ووڈ میں اچھی فلموں کی کمی کے اسباب خراب تحریریں ہیں۔

ممبئی میں ایک کتاب کے رسم اجراء کے موقع پر نصیرالدین شاہ نے کہا کہ’بہتر رائٹنگ کے بغیر کوئی اداکار مؤثر ثابت نہیں ہو سکتا خواہ وہ کتنا ہی اچھا اداکار کیوں نہ ہو۔ اگر رائٹنگ اچھی نہ ہو تو ہم کچھ بھی نہیں کر سکتے۔‘

فلم مبصرین کا یہ خیال ہے کہ فلمیوں کی کہانی لکھنے والوں کو فلم کی کامیابی کا کریڈٹ نہیں دیا جاتا اور اسی لیے بالی ووڈ میں اچھے قلم کاروں کی کافی کمی محسوس کی جاتی ہے۔

نصیر الدین شاہ بھی قلم کاروں کے تعاون کو بے حد اہم مانتے ہیں اور وہ اس بات پر اصرار کرتے ہیں کہ قلم کاروں کو زیادہ کریڈٹ ملنا چاہیے۔

نصیرالدین شاہ کہتے ہیں کہ ہندی سینما میں جو بھی کامیاب فلمیں ہوئیں اور جو بھی بہتر اداکاری ہوئی ہے ان کے اسباب یہ تھے کہ ان فلموں کے سکرپٹ اچھے لکھے گئے تھے۔

نصیرالدین شاہ کے مطابق مسلسل اچھے اور دلچسپ انداز میں لکھنا ایک انتہائی مشکل کام ہے۔

انہوں نے ہندی سینما کے مشہور مصنف، فلمساز اور شا‏عر گلزار کی مثال پیش کرتے ہوئے کہا کہ’ایک بار کا واقعہ ہے کہ گلزار کی فلمیں مسلسل ناکام ہو رہی تھیں۔ ان کے پاس اپنے آفس جانے کی کوئی وجہ نہیں تھی کیونکہ ان کے پاس کوئی کام نہیں تھا۔ لیکن وہ روزانہ نو سے ڈیڑھ بجے تک آفس جا کر مسلسل لکھتے رہتے۔ گلزار نے مجھے بتایا کہ اس دوران انھوں نے جو بھی لکھا اسے پھینک دیا لیکن ان کی اس کوشش نے ان کے ذہنی توازن کو برقرار رکھا۔‘

گذشتہ ہفتے ہی نصیر کی فلم ’میکسیمم‘ ریلیز ہوئی ہے اور اس سال ان کی فلم ڈیڑھ عشقیہ کی شوٹنگ شروع ہو رہی ہے جس میں وہ اس بار مادھوری دیکشت کے ساتھ کام کر رہے ہیں۔ یہ فلم ان کی ہٹ فلم عشقیہ کی سیکوئل ہے۔

اسی بارے میں