کامیڈین سکندر صنم نہیں رہے

آخری وقت اشاعت:  منگل 6 نومبر 2012 ,‭ 13:25 GMT 18:25 PST

پاکستان کے نامور کامیڈین سکندر صنم انتقال کر گئے ہیں، وہ گزشتہ کچھ برسوں سے کینسر کے مرض میں مبتلا تھے۔ انکی عمر صرف پینتالیس سال تھی۔

سکندر کچھ عرصہ شہر کے ایک نجی ہپستال میں زیر علاج رہے تھے جہاں سے بعد میں انہیں فارغ کردیا گیا تھا۔ انھوں نے پسماندگان میں اہلیہ کے علاوہ دو بیٹیاں اور چار بیٹے چھوڑے ہیں۔

سکندر صنم کی طبیعت بگڑنے کی خبریں مقامی میڈیا میں آئیں تو ان کے اہل خانہ نے اس کی تردید کی اور کہا کہ ’وہ روحانی علاج کرا رہے ہیں، جس سے ان کی طبیعت کافی بہتر ہے‘۔

سکندر صنم کی پیدائش کراچی میں ہوئی، ان کا نام محمد سکندر تھا، ان کے والد عبدالستّار شوقین گجراتی میں شاعری کیا کرتے تھے۔ بچپن سے سکندر کا رجحان گائیکی کی طرف تھا، انہوں نے قوالیاں بھی گائیں اور اس کی ایک کیسٹ نورانی قوالیاں کے نام سے ریلیز ہوئی تھی۔

سکندر سٹیج شوز میں چھوٹے چھوٹے کردار اد کیا کرتے تھے، بعد میں انہوں نے سٹیج شو میں اداکاری کو ہی اپنا کیرئر بنالیا۔ اس کے ساتھ ہی انہوں نے ’سکندر صنم‘ کا نام بھی اختیار کیا۔

سکندر نے پاکستان کے نامور کامیڈین معین اختر، عمر شریف اور شکیل صدیقی کے ساتھ بھی مختلف اسٹیج شوز میں کام کیا۔

سکندر نے پاکستان کے نامور کامیڈین معین اختر، عمر شریف اور شکیل صدیقی کے ساتھ بھی مختلف سٹیج شوز میں کام کیا۔

جب بھارتی ٹی وی چینلز پر کامیڈی شو مقبول ہوئے تو پاکستان کے دیگر کامیڈین کے ساتھ سکندر صنم بھی اپنی قسمت آزمانے وہاں پہنچے۔ انہیں فنجابی چکدے، دی گریٹ انڈین لافٹر چیلینج فور اور کامیڈی چیمپیئن میں خاصا پسند کیا گیا۔

سکندر صنم نے بالی ووڈ کی نامور فلموں کی پیروڈی میں بھی مرکزی کردار ادا کیا، جن میں تیرے نام ٹو، رادھے بیک، کھل نائیک ٹو، منا بھائی ایم بی بی ایس ٹو، مقدر کا سنکدر ٹو، شعلے ٹو اور گجنی شامل ہیں۔

اسی بارے میں

متعلقہ عنوانات

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔