’سوچا نہ تھا فلمی دنیا میں اتنی دیر رُکوں گا‘

آخری وقت اشاعت:  جمعـء 23 نومبر 2012 ,‭ 11:34 GMT 16:34 PST
عامر خان اور رانی مکھرجی

عامر خان کی نئی فلم ' تلاش' جلد ہی ریلیز ہونے والی ہے

بالی وڈ کے نامور اداکار عامر خان کا کہنا ہے کہ پچیس برس قبل جب انہوں نے فلمی دنیا میں قدم رکھا تو انھوں نے کبھی نہیں سوچا تھا کہ وہ اتنے لمبے عرصے تک اداکاری کریں گے۔

سنہ انیس سو اٹھاسی میں عامر خان کی پہلی کمرشل فلم ’قیامت سے قیامت تک‘ ریلیز ہوئی تھی۔ فلم کا ایک نغمہ ’پاپا کہتے ہیں بڑا نام کرے گا‘ بے حد مقبول ہوا لیکن عامر خان کا کہنا ہے کہ انہوں نے کبھی نہیں سوچا تھا کہ فلمی دنیا میں بہت نام کریں گے۔

عامرخان کو بالی وڈ میں قدم رکھے ہوئے اس برس پچیس سال مکمل ہوجائیں گے۔

عامر خان اپنے کیریئر کے ابتدائی دور کا ایک واقعہ یاد کرتے ہوئے کہتے ہیں ’جب میں فلموں میں آیا تھا، اداکارہ تبسم نے مجھ سے پوچھا کہ کیا تم کو لگتا ہے کہ تم دلیپ کمار، دیو آنند یا راج کپور کی طرح لمبی اننگز کھیل پاؤگے۔۔۔ تو میں نے کہا جی نہیں۔ اتنا لمبا میں کہاں چل پاؤں گا۔ ‘

عامر کے مطابق اسی وجہ سے وہ اپنے آپ کو خبش نصیب سمجھتے ہیں کہ وہ اتنا چل پائے۔

عامر کہتے ہیں، ’میرے کیرئیر کا پچیسواں سال میرے لئے بہت اہم ہوگا۔ میری فلم دھوم تھری اس سال ریلیز ہوگی۔ پھر میں راجکمار ہيراني کے ساتھ اپنی فلم پی کی شوٹنگ شروع کروں گا۔ پھر میں اپنے ٹی وی شو ستيمےو جيتے کے دوسرے حصے کی شوٹنگ شروع کروں گا۔‘

عامر اپنی آنے والی فلم ’تلاش‘ کے بارے میں میڈیا سے بات کر رہے تھے تو اپنے پرانے دنوں کو بھی یاد کر ڈالا۔

کیا زبردست کامیابی ملنے سے اور ٹاپ پر پہنچنے کے بعد انسان اپنے آپ کو اکیلا محسوس کرتا ہے۔ جب عامر سے یہ پوچھا گیا تو وہ بولے، ’کم سے کم میں تو ایسا محسوس نہیں کرتا۔ میں تو بہت سے لوگوں کو اپنے سے منسلک محسوس کرتا ہوں۔ مجھے بہت سے لوگوں کی محبت ملی ہے۔‘

پھر وہ ہنستے ہوئے کہتے ہیں، ’ایسا شاید اس لئے کہ میں ٹاپ پر نہیں ہوں۔‘

عامر پر اکثر ہدایت کے کام میں مداخلت کا الزام لگتا ہے۔ لیکن کیا یہ سچ ہے۔ اس کے جواب میں عامر کہتے ہیں، ’یہ بالکل سچ نہیں ہے۔ آپ خود سوچئے اگر ہدایت کاری کے کام میں میں اپنی سوچ شامل گا تو میری ہر فلم ایک جیسی لگے گی نا۔ میری ہر فلم مختلف لگتی ہے۔ کیونکہ ان کے ڈائریکٹر الگ الگ ہوتے ہیں۔ اس میں وہ اپنی سوچ ڈالتے ہیں۔‘

عامر کہتے ہیں کہ وہ بہت سوچ سمجھ کر، کہانی اور ہدایت کار کا انتخاب کرتے ہیں. پھر جب وہ اتنی محنت کر کے ڈائریکٹر کا انتخاب کرتے ہیں تو اسے اس کا کام بھلا کیوں نہیں کرنے دیں گے۔

اسی بارے میں

متعلقہ عنوانات

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔