حسینۂ عالم کا تاج مس امریکہ کے نام

آخری وقت اشاعت:  جمعرات 20 دسمبر 2012 ,‭ 06:11 GMT 11:11 PST

اولیویا کلپو کوحسینۂ عالم کا تاج پہنایا جا رہا ہے

امریکہ کے شہر لاس ویگس میں بدھ کو منتعقد کیے جانے والے عالمی مقابلۂ حسن میں مس امریکہ اولیویا کلپو کو مس یونیورس منتخب کر لیا گیا۔ اس مقابلے میں دنیا کی حسین ترین خواتین نے پیراکی کے لباس اور گاؤن پہن کر شرکت کی، اور وزن میں اضافے اور انگریزی بولنے کی اہمیت جیسے موضوعات پر اپنے خیالات کا اظہار کیا۔

دس ججوں کے پینل نے 20 سالہ سیاہ بالوں والی اولیویا کلپوکو 89 امیدواروں میں سے حسینۂ عالم منتخب کیا۔ اولیویا چیلو ساز بجاتی ہیں اور چھاتی کے سرطان کے خلاف مہم کی ترجمان ہیں۔ اس مقابلے میں بھارت سے لے کر کوسوو اور برطانیہ تک کے ممالک نے حصہ لیا۔

کلپو نے اپنے آخری شو میں پوری آستینوں والا سرخ لباس پہن رکھا تھا۔ وہ اس مقابلے کی 60 سالہ تاریخ میں آٹھویں امریکی فاتح ہیں، اور 1997 کے بعد سے پہلی مس یو ایس اے ہیں جنھوں نے یہ اعزاز حاصل کیا ہے۔

ججوں کے سوالات کے جواب دینے کے بعد فلپائن سے تعلق رکھنے والی 23 سالہ جینن ترگنون دوسرے نمبر پر، جب کہ مس وینزویلا آئرین سوفیا تیسرے نمبر پر آئیں۔

کلپو کا تعلق ریاست روڈ آئی لینڈ سے ہے۔ وہ گذشتہ سال منتخب ہونے والی انگولا سے تعلق رکھنے والی مس یونیورس لیلا لوپیس کی جگہ سنبھالیں گی۔

دو گھنٹے جاری رہنے والے اس مقابلے کے بعد مس گوئٹے مالا لارا گوڈوے کو مس کنجینی ایلٹی (مس ہم آہنگی) منتخب کیا گیا۔

مقابلے میں حصہ لینے والی امیدواروں کی عمریں 18 سے 27 کے درمیان ہونی چاہیئیں اور وہ غیر شادی شدہ اور بغیر اولاد کے ہونی چاہیئیں۔

یہ مقابلہ لاس ویگس کے پلانٹ ہالی وڈ ہوٹل سے براہِ راست دکھایا گیا، اور منتظمین کے مطابق اسے دنیا کے 190 ملکوں کے ایک ارب کے لگ بھگ ناظرین نے دیکھا۔

کلپو اگلے سال مس یونیورس آرگنائزیشن اور اپنی پسند کے کسی خیراتی ادارے کی نمائندگی کرتے ہوئے دنیا بھر کا دورہ کریں گی۔

مقابلے کے دوران 14 دسمبر کو امریکی ریاست کنیٹی کٹ میں ہلاک ہونے والوں کی یاد میں خاموشی اختیار کی گئی۔

اسی بارے میں

متعلقہ عنوانات

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔