’نمبر ون کی دوڑ ابھی ختم نہیں ہوئی‘

آخری وقت اشاعت:  پير 24 دسمبر 2012 ,‭ 07:45 GMT 12:45 PST
شاہد نذیر

پینسٹھ لاکھ سے زائد افراد شاہد نذیر کی یہ ویڈیو یو ٹیوب پر دیکھ چکے ہیں

برطانیہ اور دیگر ممالک میں ’ون پاؤنڈ فش‘ نامی نغمے سے مقبولیت حاصل کرنے والے پاکستانی شاہد نذیر کا گانا کرسمس چارٹس میں تو سرِفہرست نہیں آ سکا لیکن وہ اپنے مستقبل کے بارے میں مایوس نہیں ہیں۔

بی بی سی اردو سے بات چیت کرتے ہوئے ان کا کہنا تھا کہ اگرچہ ان کا گانا کرسمس چارٹس میں شامل دو سو نغموں میں انتیسویں نمبر پر رہا ہے لیکن یہ بات ان کے لیے باعثِ فخر ہے کہ وہ پہلے پاکستانی ہیں جنہیں یہ اعزاز حاصل ہوا ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ ان کا گانا صرف دو ہفتے قبل ہی ریلیز ہوا ہے اور اس عرصے میں جتنی مقبولیت اسے ملی ہے وہ ناقابلِ یقین ہے۔

انہوں نے کہا کہ ویڈیو ڈاؤن لوڈنگ کے معاملے میں ان کی ویڈیو مقبول ترین ویڈیوز میں چوتھے نمبر پر ہے۔

شاہد نذیر نے کہا کہ ’میں اتنا خوش ہوں کہ آپ سمجھیں جیسے کہ نمبر ون ہی آیا ہوں‘۔ ان کا کہنا تھا کہ کرسمس پر تو ان کا گانا مقبول ترین نہیں بن سکا لیکن وہ پرامید ہیں کہ آنے والے دنوں میں اس کی مقبولیت میں مزید اضافہ ہوگا۔

انہوں نے ان اطلاعات کی تردید کی کہ انہیں برطانوی امیگریشن حکام نے ویزے کی معیاد ختم ہونے پر ملک چھوڑنے کو کہا ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ وہ پچیس دسمبر کو اپنے ویزے کی نوعیت میں تبدیلی کے لیے پاکستان آ رہے ہیں اور واپس لندن جانے کر گلوکاری کا سلسلہ جاری رکھنے کا ارادہ رکھتے ہیں۔

پاکستان کے شہر لاہور کے قریبی قصبے پتوکی کے محمد شاہد نذیر حصولِ تعلیم کے لیے برطانیہ گئے تھے۔

وہاں انہوں نے گزر بسر کے لیے مشرقی لندن میں کی ایک مارکیٹ میں مچھلی کی فروخت کا کام شروع کیا اورگاہکوں کو متوجہ کرنے کے لیےگلوکاری کا سہارا لیا۔

بازار میں آنے والے افراد کی جانب سے پسند کیے جانے پر شاہد نذیر نے ٹی وی پروگرام ایکس فیکٹر میں قسمت آزمائی کی۔ وہاں تو انہیں کامیابی نہ مل سکی لیکن انٹرنیٹ پر ان کےگانا گا کر مچھلی فروخت کرنے کی ویڈیو کو خوب مقبولیت حاصل ہوئی۔

اس مقبولیت کو دیکھتے ہوئے بین الاقوامی میوزک کمپنی وارنر نے رواں برس ان کے اس گانے کو باقاعدہ میوزک ویڈیو کی شکل دینے کے لیے ان سے معاہدہ کیا تھا۔

تقریباً دو ہفتے قبل ان کی یہ ویڈیو منظرِ عام پر آئی اور اب تک پینسٹھ لاکھ سے زائد افراد یہ ویڈیو یو ٹیوب پر دیکھ چکے ہیں۔

متعلقہ عنوانات

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔