ڈائریکٹر پر تیزاب سے حملہ کرنے کا اعتراف

آخری وقت اشاعت:  بدھ 6 مارچ 2013 ,‭ 13:01 GMT 18:01 PST
پیول دمیتریچنکو فائل فوٹو

اس حملے کے ماسٹر مائنڈ ڈانسر پیول دمیتریچنکو کو منگل کو حراست میں لیا گیا، پولیس

ماسکو میں پولیس کا کہنا ہے کہ بولشوئی بیلے کے ایک مرکزی رقاص اور دیگر دو افراد نے کمپنی کے آرٹسٹک ڈائریکٹر پر تیزاب سے حملہ کرنے کا اعتراف کیا ہے۔

پولیس کے مطابق اس حملے کے مبینہ ماسٹر مائنڈ ڈانسر پیول دمیتریچنکو اور ایک اور شخص یوری زارتسکی کو منگل کو حراست میں لیا گیا۔

پولیس کا کہنا ہے کہ اس واقعہ کے سلسلے میں ایک گیٹ وے گاڑی چلانے والے آدمی کو بھی گرفتار کر لیا گیا۔

خیال رہے کہ بولشوئی بیلے کمپنی کے آرٹسٹک ڈائریکٹر بیالیس سالہ سرگئی فیلن کی بینائی اس وقت شدید متاثر ہوئی جب ایک نقاب پوش حملہ آور نے جنوری میں ان کے چہرے پر سلفیُورک ایسڈ پھینک دیا۔

اس حملے کے بعد سرگئی فیلن کی آنکھوں کے سلسلہ وار آپریشنز کیے گئے جس کے بعد انہیں جرمنی بھیج دیا گیا جہاں ڈاکٹروں کو امید ہے کہ مہینوں کے مزید علاج کے بعد ان کی بینائی شاید بحال ہو سکتی ہے۔

سرگئی فیلن پر حملہ سترہ جنوری کو ان کے ماسکو سے باہر واقع گھر پر کیا گیا تھا۔

بی بی سی نامہ نگار کا کہنا ہے کہ اس حملے نے بولشوئی تھیٹر کی اندرونی کشمکش اور رقابت کا نیا سلسلہ کھول دیا۔

ماسکو پولیس نے منگل کو ڈانسر پیول دمیتریچنکو کے فلیٹ کی تلاشی لینے سے پہلے تینوں مشتبہ افراد کو حراست میں لینے کی تصدیق کی۔

ماسکو پولیس کے ترجمان نے بدھ کو بتایا کہ تینوں افراد نے اعترافی جرم پر دستخط کیے جس کے بعد انہیں گرفتار کر لیا گیا۔

پولیس نے ایک ویڈیو جاری کی ہے جس میں ڈانسر پیول دمیتریچنکو کہہ رہے کہ کہ وہ اس حملے کے ماسٹر مائنڈ تھے

ماسکو میں بی بی سی کے نامہ نگار ڈینئل سینڈفورڈ کا کہنا ہے کہ روس میں اعترافِ جرم کرنا عام ہے جس کے بعد ملزمان بدسلوکی کی شکایت کرتے ہیں۔

ڈانسر پیول دمیتریچنکو سنہ دو ہزار دو سے تھیٹر سے وابستہ ہیں مگر ان کا شمار کمپنی کے سینئیر مرد ڈانسروں میں نہیں ہوتا تاہم وہ ون لیول ڈاؤن کے فنکاروں میں سے ہیں۔

متعلقہ عنوانات

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔