سزا کی معافی کی اپیل نہیں کروں گا:سنجے دت

Image caption میں نے معافی کے لیے کہیں درخواست نہ دینے کا فیصلہ کیا ہے: سنجے دت

بھارتی اداکار سنجے دت نے کہا ہے کہ وہ سپریم کورٹ کی جانب سے پانچ سال کی سزا کے فیصلے کے خلاف اپیل نہیں کریں گے اور دی گئی مدت میں خود کو قانون کے حوالے کر دیں گے۔

سنجے دت کو سنہ دو ہزار چھ میں ممبئی میں 1993 کے دھماکوں کے ملزمان سے ہتھیار ِخریدنے کے الزام میں مجرم قرار دیا گیا تھا اور وہ پہلے ہی اٹھارہ ماہ کی جیل کاٹ چکے ہیں۔

اس معاملے میں وہ دو ہزار سات سے ضمانت پر تھے تاہم رواں برس اکیس مارچ کو سپریم کورٹ نے اپنے فیصلے میں سنجے دت کی سزا چھ سال سے کم کر کے پانچ سال کر دی تھی اور انہیں خود کو حکام کے حوالے کرنے کے لیے چار ہفتے کا وقت دیا تھا۔

جمعرات کو ممبئی میں اپنی بہن اور رکن پارلیمان پریہ دت کے ہمراہ صحافیوں سے بات کرتے ہوئے سنجے دت نے کہا کہ وہ سپریم کورٹ کی دی گئی ایک ماہ کی مدت میں جیل جائیں گے۔

سنجے نے کہا کہ وہ قانون کا احترام کرتے ہیں اور عدالت کے فیصلے کا احترام کریں گے۔ انہوں نے کہا کہ یہ ان کے اور ان کی خاندان کے لیے ایک مشکل گھڑی ہے۔

انہوں نے جذباتی لہجے میں کہا کہ ’میں اپنی سزا ختم کرانے کے لیے معافی کی درخواست نہیں کروں گا اس لیے اس بارے میں بحث کی کوئی وجہ نہیں ہے۔ مجھے لگتا ہے کہ ایسے کئی اور لوگ ہیں جنہیں معافی دی جانی چاہیے۔‘

سنجے دت نے کہا کہ وہ جیل جانے سے پہلے بچے ہوئے وقت میں اپنی فلمیں پوری کرنے کی کوشش کریں گے۔’میرے پاس بہت کم وقت بچا ہے اور میں اس وقت میں اپنی فلموں کی زیادہ سے زیادہ شوٹنگ مکمل کرنا چاہتا ہوں۔‘

واضح رہے کہ جیل میں 18 مہینے کی سزا کاٹنے کے بعد سنجے دت کے كیريئر میں ’منا بھائی‘ سیریز کی فلموں نے نئی جان پھونک دی تھی لیکن اب اس فیصلے کے بعد اب اس سیریز کی تیسری فلم کے مستقبل پر سوال کھڑے ہو گئے ہیں۔

معروف وکیل موکول سنہا نے کہا ہے کہ سنجے دت کو سزا دینے کافیصلہ بالکل صحیح ہے لیکن انہیں جو سزا دی گئی ہے وہ بہت سخت ہے ۔’تعزیرات ہند کے تحت سنجے کو اپنی باقی بچی ہوئی سزاؤں کی مدت میں پیرول پر رہائی کا حق یاصل ہے اور انہیں اپنے اس قانونی حق کا استعمال کرنا چاہیے۔‘

سپریم کورٹ کے سابق جج جسٹس مارکنڈے کاٹجو نے کہا ہے کہ وہ سنجے کے بیان کے باوجود ملک کے صدر اور مہاراشٹر کے گورنر سے ان کے لیے معافی کی درخواست کریں گے ۔

جسٹس کاٹجو کا کہنا ہے کہ سنجے نے غلطی کی تھی اس کے لیے اسے سزا بھی مل چکی ہے۔ ’وہ بیس برس سے مسلسل پریشانی جھیل رہا ہے اور اب اسے مزید سزا نہیں دی جانی چاہیے۔‘

ان کے اس بیان سے ملک میں سنجے دت کو معاف کرنے کے سوال پر پھر بحث چھڑ گئی ہے۔

اسی بارے میں