بالی وڈ میں ’ہیروئن محض سیکس سمبل‘

ودیا بالن

فطرت کا اصول ہے کہ عمر کے ساتھ چیزیں ڈھلنے لگتی ہیں مگر ہندوستانی سنیما کی صنعت سو سال کی ہونے کے باوجود روز بروز جوان ہوتی جا رہی ہے۔

1913 میں دادا صاحب پھالكے کی خاموش فلم ’راجا ہریش چندر‘ سے آنکھیں کھولنے والا ہندوستانی سنیما اپنی سنچری تین مئی 2013 کو مکمل کر رہا ہے۔

ان سو برسوں میں ہندوستانی سنیما مختلف قسم کی تبدیلیوں سے ہمکنار ہوا ہے۔ جو بات نہیں بدلی وہ ہے اداکاراؤں کو پیش کرنے کا انداز۔

شاید اداکاراؤں کو صرف ایک خوبصورت شے کی طرح پیش کرنے کے تصور کے پیش نظر ہی زیادہ تر فلموں میں انہیں کم اور ہیجان انگیز لباس میں دکھایا گیا اور یہ سلسلہ آج بھی برقرار ہے۔

بی ڈی گرگ نے اپنی کتاب ’سو میني سینماز: دی موشن پکچر ان انڈیا‘ میں لکھا ہے کہ 1921 میں پیش کی جانے والی فلم ’ستی انسويا‘ میں پہلی بار کوئی برہنہ منظر دکھایا گیا تھا۔ اس میں سكينہ بائي نام کی ایک اداکارہ کو مکمل طور پر برہنہ دکھایا گیا تھا۔

Image caption مہیش بھٹ کی فلم جسم میں بپاشا باسو نے کئی بولڈ سین دیئے ہیں

بہرحال اس کتاب میں بیان اس حقیقت کو فلمی پنڈت اور ناقد جے پرکاش چوكسے تسلیم نہیں کرتے۔ وہ کہتے ہیں: ’اس بارے میں مجھے کوئی معلومات نہیں ہے لیکن یہ ممکن ہے کیونکہ 1918ء میں جب برطانوی حکومت نے بھارت میں ’سینسر شپ ایکٹ‘ نافذ کیا تو اس وقت اس ایکٹ میں صرف ایک دفعہ تھی کہ وطن پرستی کا پیغام دینے والی فلموں کو روک دیا جائے۔ عریانی اور بوسے کے خلاف اس ایکٹ میں کوئی دفعہ نہیں تھی۔‘

چوكسے کے مطابق 1922ء میں آنے والی فلم ’شوہر بیوی‘ میں اٹلی کی اداکارہ مینے لي نے کچھ بہت ہی بولڈ مناظر دیے تھے۔ اس کے بعد 1942 میں معروف اداکارہ بیگم پارہ نے ’چاند‘ فلم میں چند پرکشش مناظر فلم بند کروائے تھے۔

چوكسے کہتے ہیں ’بیگم پارہ کی ایک بہت ہی بولڈ تصویر 1943 میں ’لائف‘ میگزین کے سرورق پر بھی آئی۔ دوسری عالمی جنگ کے دوران فوجی اپنے بنکروں میں بیگم پارہ کی یہی تصویریں اپنی دیواروں پر چسپاں کرتے تھے۔‘

بہر حال ہندوستانی فلموں میں جسم کی نمائش کرنے والی اداکاراؤں کی فہرست بہت لمبی ہے۔ اس فہرست میں آپ بیگم پارہ سے لے کر نلنی جيونت، نرگس، ويجنتي مالا، شرمیلا ٹیگور، بندو، زینت امان، ڈمپل كپاڈيا، سیمی گریوال، منداكني سے لے کر آج کے دور کی کئی اداکاراؤں جیسے نندتا داس، ملکا شیراوت، ایشا گپتا، ودیا بالن اور بپاشا باسو کے نام شامل کر سکتے ہیں۔ اس فہرست میں دوسری زبانوں کے علاقائی سنیما کی اداکارائیں بھی شامل ہیں۔

Image caption ملکا شیراوت اپنے بولڈ سینز کے لیے ہی جانی جاتی ہیں

بہر حال ایک سوال جو اکثر کئی لوگ اٹھاتے ہیں وہ یہ کہ کیا فلموں میں اداکاراؤں کو یوں ’سیکس سمبل‘ کے طور پر استعمال کرنا درست ہے؟

ٹی وی اور فلم پروڈیوسر ایکتا کپور نے ’راگنی ایم ایم ایس‘، ’لو سیکس اور دھوکہ‘ اور ’دا ڈرٹي پکچر‘ جیسی فلمیں بنائی ہیں۔ ان کا کہنا ہے ’جہاں تک فلموں میں عریانی کا سوال ہے ہم ہمیشہ سے یہ سنتے آ رہے ہیں کہ فلموں میں عورتوں کو عیش پسندی اور تلذذ کی چیز کی طرح پیش نہ کریں، ہیروئن کو کم کپڑوں میں نہ دکھائیں۔ جو لوگ ایسی باتیں کرتے ہیں میں ان سے یہ پوچھنا چاہتی ہوں کہ جب جان ابراہم اپنے کپڑے اتارتے ہیں تو کسی کو کوئی اعتراض کیوں نہیں ہوتا؟‘

انھوں نے ہندوستانی سینما کے سو سال کے جشن کے سلسلے میں ایک پروگرام کے دوران بات کرتے ہوئے اپنی فلم ’دا ڈرٹي پکچر‘ کے بارے میں کہا ’جب ہم نے یہ فلم بنائی بہت سے لوگوں نے ہم سے یہ کہا کہ آپ کس طرح ایک عورت کی جنسیت کو اس طرح دکھا سکتی ہیں۔ مجھے پتا تھا کہ اس فلم کو بنا کر مجھے زبردست نقصان ہو سکتا ہے لیکن پھر بھی میں نے یہ فلم اس لیے بنائی کیونکہ میں چاہتی تھی کہ سماج عورت کی جسمانی ضروریات کے بارے میں بھی سوچے اور عورت کو صرف اپنے عیش کا سامان نہ سمجھے۔‘

Image caption کرینہ کپور حال ہی میں آنے والی فلم ہیروئن میں کچھ بولڈ سین کیے ہیں

بہر حال کچھ فلمساز اس کے بارے میں یہ دلیل دیتے آئے ہیں کہ وہ تو اپنی فلموں میں وہی دکھاتے ہیں جو ناظرین دیکھنا چاہتے ہیں۔

فلموں میں عورت کو کس طرح پیش کیا جائے اس بات پر بحث اور اختلاف شاید ہمیشہ رہے لیکن یہ سوال بھی ہمیشہ اٹھے کہ فلموں میں اداکاراؤں کو فحش انداز میں پیش کرنا ٹھیک ہے یا نہیں۔ شاید فلمساز اسے اپنی فنکارانہ آزادی کہیں۔

لیکن یہ سوال شاید اب بھی برقرار ہے کہ کیا فنکارانہ آزادی کے نام پر کچھ بھی کرنا یا دکھانا درست ہے؟ شاید اس کا جواب اگلے سو سال میں بھی نہ مل سکے۔

اسی بارے میں