ہیروئنیں جو قبل از وقت دنیا سے چلی گئیں

جیا خان
Image caption جیا خان نے امیتابھ بچن کے ساتھ اپنے کیریئر کی شروعات کی تھی

ممبئی میں اپنے فلیٹ پر مردہ پائی جانے والی اداکارہ جیا خان صرف 25 سال کی تھیں اور وہ بالی وڈ کی ایسی پہلی اداکارہ نہیں جنھوں نے اتنی کم عمری میں ہی دار فانی کو الوداع کہا ہو۔ بی بی سی سے بات کرتے ہوئے فلم نقاد جے پرکاش چوكسے نے بعض ایسی بڑی ہیروئنوں کے بارے میں بتایا جن کی زندگی اچانک ختم ہوگئي۔

مدھوبالا

Image caption مدھوبالا کا شمار بالی وڈ کی خوبصورت ترین اداکاراؤں میں ہوتا رہا ہے

بالی وڈ کی سب سے خوبصورت اداکارہ مانی جانے والی مدھوبالا نے بھی صرف 36 سال کی عمر میں اس دنیا کو الوداع کہہ دیا تھا۔

ان کی ہلاکت کی وجہ دل کی بیماری بنی تھی۔ مدھوبالا کے دل میں ایک چھوٹا سا سوراخ تھا اور اس وقت یہ بیماری ناقابل علاج تھی۔ جے پرکاش چوكسے کہتے ہیں: ’مدھوبالا کے آخری سال انتہائی المناک رہے۔ وہ آئینہ دیکھ کر گھبرا جاتی تھیں۔ ان کا خوبصورت چہرہ آہستہ آہستہ بگڑنے لگا تھا۔ وہ ہر دن اپنے میک اپ مین کو گھر بلانے لگیں۔ شوٹنگ نہ ہوتے ہوئے بھی وہ میک اپ کر کے بیٹھی رہتی تھیں۔‘

انھوں نے مزید کہا: ’اتنا ہی نہیں مدھوبالا کے اردگرد رہنے والے لوگ ہمیشہ ان کی خوبصورتی کی تعریف کرتے رہتے تھے تاکہ وہ مایوس نہ ہو جائیں۔‘

مدھوبالا کی یادگار فلموں میں مغل اعظم، ترانہ، امر، چلتی کا نام گاڑی، ہاف ٹکٹ، مسٹر اینڈ مسز55 ، کالا پانی، ہاوڑہ برج، محل اور برسات کی ایک رات وغیرہ شامل ہیں۔

مینا کماری

Image caption مینا کماری کو ٹریجڈی کوئن کے طور پر بھی یاد کیا جاتا ہے

مینا کماری کی جب موت ہوئی اس وقت ان کی عمر 39 سال تھی۔ 31 مارچ 1972 کو ان کی موت جگر کے عارضے کی وجہ سے ہوئی۔

مینا کماری کے بارے میں بات کرتے ہوئے چوكسے کہتے ہیں: ’مینا کماری کی شراب نوشي کے قصے بہت مشہور ہیں۔ اپنے آخری سالوں میں وہ بہت زیادہ شراب پینے لگیں تھیں۔‘

اتنا ہی نہیں چوكسے بتاتے ہیں کہ کس طرح مینا کماری کے قریبی لوگ انہیں دیسی شراب ہو کہ غیر ملکی شراب ہر طرح کی شراب بوتل میں بھر کر دے دیتے تھے۔ نشے میں ڈوبی مینا کو کچھ اس کا کچھ دھیان نہیں رہتا کہ وہ کون سی شراب پی رہی ہیں۔

مینا کماری کی بہتری فلموں میں، پاکیزہ، کوہ نور، آزاد، یہودی، صاحب بی بی اور غلام، دل اپنا اور پریت پرائی، دل ایک مندر، آرتی، بیجو باورا وغیرہ شامل ہیں۔

سمیتا پاٹل

Image caption سمیتا پاٹل نے کم ہی فلموں میں کام کیا ہے لیکن ان کی اداکاری کو سب مانتے ہیں

اپنے زمانے کی معروف اداکارہ سمیتا پاٹل کی موت ان کے بیٹے پرتیک کی پیدائش کے فورا بعد زچگی سے متعلق بعض پیچیدگیوں کی وجہ سے ہوئی۔ انتقال کے وقت وہ صرف 31 سال کی تھیں۔

سمیتا پاٹل بالی وڈ کے اداکار راج ببر کی بیوی تھیں۔

چوكسے کہتے ہیں: ’سمیتا پاٹل حیرت انگیز اداکاری کی صلاحیت کی مالک تھیں۔ فلم ’وارث‘ ان کے کیریئر کی بہترین فلموں میں سے ایک تھی۔ انھوں نے ’ارتھ‘، ’بھومیکا‘، ’منڈی‘ اور ’نشانت‘ جیسی کئی یادگار فلمیں دیں۔

سلک سمیتا

Image caption سلک سمیتا کے کردار پر ڈرٹی پکچرز نامی فلم بنی ہے جس کے ودیا بالن کو کئی ایوارڈ ملے ہیں

جنوبی ہندوستان کی دھڑکن کہی جانے والی سلک سمیتا 23 ستمبر 1996 کو چنئی میں اپنے گھر میں مردہ پائی گئیں۔ وہ 35 سال کی تھیں۔

ایسا کہا جاتا ہے کہ سلک اپنی زندگی سے اس قدر مایوس ہو گئیں تھیں کہ انہوں نے خود کشی کر لی۔

سلک سمیتا کے بارے میں بات کرتے ہوئے چوكسے کہتے ہیں: ’سلک کو ان کی مقبولیت لے ڈوبی۔ ان کی تصویر جنسیت کی علامت ’سیکس سائرن‘ کی مانند بن چکی تھی۔

انھوں نے مزید کہا کہ ’رسائل میں ان کے بارے میں بھدّي باتیں لکھی جا رہی تھیں۔ راہ چلتے لوگ انہیں گندے اشارے کیا کرتے تھے۔ یہ سب ان سے برداشت نہ ہو سکا۔‘

دویا بھارتی

Image caption دویا بھارتی کو کم عمری میں جو مقبولیت ملی اسے وہ سنبھال نہ سکیں

دویا بھارتی صرف 19 سال کی تھیں جب ممبئی میں پانچ منزلہ عمارت سے گرنے کی وجہ سے ان کی موت ہوئی۔

ان کی موت کے متعلق طرح طرح کے سوال اٹھائے گئے۔ کسی نے کہا کہ یہ ایک حادثہ تھا، کسی نے اسے خودکشی کہا تو کسی نے کہا کہ دویا سازش کا شکار ہوئیں۔ تاہم پولیس کو اس بارے میں کوئی ٹھوس ثبوت نہیں مل پایا۔

دویا بھارتی کے بارے میں بات کرتے ہوئے چوكسے کہتے ہیں: ’دویا کی موت کو پولیس جانچ میں تو حادثہ ہی پایاگیا۔ جانچ میں یہ بھی سامنے آیا کہ وہ نشے میں تھیں اور خود کو سنبھال نہیں پائی اور نیچے گر گئیں۔‘

انھوں نے مزید بتایا: ’میں سمجھتا ہوں کہ دویا بھارتی کی موت بھی کامیابی کی وجہ سے ہوئی۔ بہت چھوٹی عمر میں بہت بڑی کامیابی انہیں مل گئی تھی۔ اتنی بڑی کامیابی کو کیسے سنبھالنا ہے یہ وہ سمجھ نہیں پائیں۔ اس لیے شاید وہ منشیات بھی لینے لگیں اور شراب بھی۔‘

جیا خان

جیا خان کے بارے میں بات کرتے ہوئے چوكسے کہتے ہیں: ’میں جیا سے کئی بار مل چکا تھا۔ انہوں نے بیرون ملک اپنی تعلیم حاصل کی جہاں کا ماحول بہت کھلا ہوتا ہے۔ وہاں سے وہ بالی وڈ میں آئیں اور یہاں آتے ہی انہوں نے تین بڑی فلموں میں کام کیا۔ تینوں فلمیں کامیاب رہیں، لیکن فلم انڈسٹری میں کامیاب فلمیں اس بات کی ضمانت نہیں ہے کہ آپ کو کام ملتا ہی رہے گا۔‘

چوكسے مزید کہتے ہیں: ’یہاں کام حاصل کرنے کے لیے کچھ دنياداري بھی کرنی پڑتی ہے۔ لوگوں سے ملنا جلنا پڑتا ہے، لیکن یہ کہنا بھی درست نہیں ہوگا کہ کام نہ ملنے کی وجہ سے جیا کی موت ہوئی ہے۔ وہ صرف 25 سال کی تھیں اگر فلموں میں کام نہیں مل رہا تھا تو ٹی وی میں کام کر سکتی تھیں۔ موقع کی کمی ان کی موت کی وجہ نہیں ہو سکتی ہاں اگر کوئی خاندانی وجہ ہو تو اس کی معلومات ہمیں نہیں۔‘

اسی بارے میں