اٹلی: مونا لیزا کی شناخت کے لیے قبر کشائی

Image caption ماہرین کئی صدیوں سے اس گتھی کو سلجھانے میں مصروف ہیں کہ پینٹنگ میں موجود مونا لیزا دراصل کون سی عورت تھی

اٹلی کے شہر فلورنس میں سائنسدانوں نے ایک قبر کو دوبارہ کھود کر اُس میں موجود لاش کا ڈی این اے حاصل کیا ہے تاکہ لیونارڈو ڈاونچی کی معروف ماڈل مونا لیزا کا پتا لگایا جا سکے۔

اس قبر میں لیزا گراردینی کے خاندان کے لوگ دفن ہیں جو ایک ریشم کے تاجر کی بیوی تھیں۔ لیزا گراردینی کے بارے میں خیال کیا جاتا ہے کہ وہ لیونارڈد ڈا ونچی کی اس معروف تصویر کے لیے بیٹھیں تھی۔

یہ اُمید کی جا رہی ہے کہ ڈی این اے ماہرین کی اس بات کے تعین میں مدد کرے گا کہ گذشتہ برس ایک گرجہ گھر سے ملنے والی تین کھوپڑیوں میں سے لیونارڈو کی ماڈل کون سی ہے۔

ماہرین کئی صدیوں سے اس گتھی کو سلجھانے میں مصروف ہیں کہ پینٹنگ میں موجود مونا لیزا دراصل کون سی عورت تھی۔

ڈی این اے حاصل کرنے کے لیے سائنسدانوں نے قبر کے اوپر تعمیر ایک گرجہ گھر کے پتھر سے بنے فرش میں سراخ کیا۔

مصنف اور محقق سلوانو ونسیٹی کا ارادہ ہے کہ سینٹ ارسلہ کے گرجہ گھر کے قریب سے ملنے والی تین کھوپڑیوں کے ڈی این اے کا اس قبر سے ملنے والی ہڈیوں کے ڈی این اے کا موازنہ کریں گے۔

لیزا گراردینی سنہ پندرہ سو بیالیس میں وفات پا گئی تھیں۔

Image caption ڈی این اے حاصل کرنے کے لیے سائنسدانوں نے قبر کے اوپر تعمیر ایک گرجہ گھر کے پتھر سے بنے فرش میں سُراغ کیا

امید کی جا رہی ہے کہ ہڈیاں کم از کم ان کے کسی قریبی رشتے دار ممکنہ طور پر ان کے بیٹے پیئیرو کی ہوں گی۔

سلوانو ونسیٹی کا کہناتھا کہ اگر انہوں نے قبروں میں ماں اور بیٹے کا رشتہ قائم کرلیا تو ’ہم نے مونا لیزا ڈھونڈ لی‘۔

انھوں نے کہا کہ اس تصدیق کے بعد کمپیوٹر کی مدد سے کھوپڑیوں کی شکل تیار کی جا سکے گی اور پھر اس کا پینٹنگ سے موازنہ کیا جا سکے گا۔

لیونارڈو ڈاونچی نے دنیا کی معروف ترین اس پینٹنگ کو پندرہ سال میں تیار کیا تھا۔ ان کی وفات کے بعد فرانس کے بادشاہ نے اسے خرید لیا تھا۔

پیرس کے مشہور لوو میوزیم میں مونا لیزا کی یہ پینٹنگ سیاحوں میں بہت مقبول ہے۔

اسی بارے میں