ہم نے جو طرزِ فغاں کی ہے چمن میں ایجاد

فیض احمد فیض کی سالگرہ کے موقعے پر اگر آپ کو ان کا کوئی شعر یاد آیا ہے تو ہمیں لکھ بھیجیے۔ ہم اسے آپ کے نام کے ساتھ شائع کریں گے۔ اردو رسم الخط میں لکھے گئے اشعار کو ترجیح دی جائے گی۔

آپ کے اشعار

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

تو نے ديکھے ہيں وہ عارض وہ رخسار وہ ہونٹ زندگی جن کے تصور ميں لٹا دی ہم نے

تجھ پہ اٹھی ہيں وہ کھوئی ہوئی ساحر آنکھيں تجھ کو معلوم ہے کيوں عمر گنوا دی ہم نے

ابراربلوچ، ملتان

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

مشکل ہے اگر حالات وہاں، دل بیچ آئیں جاں دے آئیں دل والوں کوچۂ جاناں میں‌ کیا ایسے بھی حالات نہیں

ماجد علی، لاہور

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

دل ناامید تو نہیں، ناکام ہی تو ہے لمبی ہے غم کی شام، مگر شام ہی تو ہے

ناصر حسین، ترینو، اٹلی

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

فیض آتے ہیں رہِ عشق میں جو سخت مقام آنے والوں سے کہو ہم تو گزر جائیں گے

محمد کليم فراز، جھنگ صدر

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

تو جو مل جاۓ تو تقدير نگوں ہوجائے يوں نہ تھا، ميں نے فقط چاہا تھايوں ہوجائے

اور بھی دکھ ہيں زمانہ ميں محبت کے سوا راحتيں اور بھی ہيں وصل کی راحت کے سوا

حسن جان، پشاور، پاکستان

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ہوئی ہے حضرت ناصح سے گفتگو جس شب وہ شب ضرور سرِ کوئے یار گزری ہے

ندیم جمالی، کراچی

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

تم آۓ ہو نہ شب انتظار گزری ہے تلاش ميں ہے سحر بار بار گزری ہے

محمد عابد، بہاولنگر

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

تھک کر یونہی پل بھر کے لیے آنکھ لگی تھی سو کر ہی نہ اٹھیں یہ ارادہ تو نہیں تھا

خرم عباس، اسلام آباد

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

مشکل ہیں اگر حالات وہاں، دل بیچ آئیں جاں دے آئیں یہ جان تو آنی جانی ہے، اس جاں کی تو کوئی بات نہیں

حسین منصور، کراچی، پاکستان

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

جو رکے تو کوہِ گراں تھے ہم، جو چلے توجاں سے گزر گئے رہِ يار ہم نے قدم قدم تجھے يادگار بنا ديا

شاہد، ٹورنٹو

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

یہ داغ داغ اجالا، یہ شب گزیدہ سحر وہ انتظار تھا جس کا یہ وہ سحر تو نہیں

مجاہد، دبئی

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

مشکل ہیں اگر حالات وہاں دل بیچ آئیں جاں دے آئیں دل والو کوچہ جاناں میں کیا ایسے بھی حالات نہیں

زین، ملتان پاکستان

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

دستِ صیاد بھی عاجز ہے، کفِ گلچیں بھی بوئے گل ٹھہری نہ بلبل کی زباں ٹھہری ہے

فرحان افضل، لاہور

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

کب ٹھہرے گا دردِ دل، کب رات بسر ہو گی سنتے تھے وہ آئیں گے، سنتے تھے سحر ہو گی

توصیف، عرب امارات

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

فریبِ وعدۂ فردا پر اعتماد کرے خدا وہ وقت نہ لائے کہ تجھ کو یاد آئے وہ دل کہ تیرے لیے بےقرار ہے اب بھی وہ آنکھ جس کو تیرا انتظار ہے اب بھی

عرفان اللہ، سپین

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

رموزِ مملکتِ حرف جاننے والے دلوں کو صورتِ معنی کشادہ رکھتے ہیں

افتخارعظيم

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔