’ایسے آئیں گے کہ سب ٹُکر ٹُکر دیکھتے رہ جائیں گے‘

تصویر کے کاپی رائٹ SPICE
Image caption راجکمار ہیرانی کی فلم ’پی کے‘ میں اس فلم کے ہیرو یعنی عامر خان بھوجپوری زبان بولتے نظر آنے والے ہیں

ہندی فلم ’گودان' میں محمد رفیع کی آواز میں معروف نغمہ ’پپرا کے پتوا سریكھے ڈولے منوا، کے جيئرا میں اٹھے لا ہلور۔۔۔‘ ہو یا پھر فلم گنگا جمنا کا مقبول گیت ’نین لڑ جئی ہیں تو منوا میں کسکس ہوئے بے کریں۔۔۔‘ پر دلیپ کمار کا دھوتی پہن کر رقص کرنا بھلا کون بھول سکتا ہے۔

ایک زمانہ وہ بھی تھا جب ’كھئی کے پان بنارس والا۔۔۔‘ کی رنگت لیے فلم ’ڈان‘ کے گانے پر بہت سے لوگ تھرک اٹھتے تھے پھر بھی بھوجپوری زبان بالی ووڈ کے ہیرو کی زبان کبھی نہیں ہو سکی۔

بھوجپوری صرف فلموں میں نوکر، مالی، سبزی والوں کی زبان بن کر رہ گئی۔ لیکن اب ہیرو بولےگا بھوجپوری، جس پر ہیروئن کا دل آئے گا۔

یہ کہنا ہے بالی وڈ کے اداکار عامر خان کو بھوجپوری سکھانے والے استاد شانتی بھوشن کا۔

تصویر کے کاپی رائٹ chandra barot
Image caption امیتابھ بچن نے فلم ڈان میں بھوجپوری زبان کا استعمال کیا ہے

واضح رہے کہ راجکمار ہیرانی کی فلم ’پی کے‘ میں اس فلم کے ہیرو یعنی عامر خان بھوجپوری زبان بولتے نظر آنے والے ہیں۔

شانتی بھوشن بھوجپوری میں ٹی وی سکرپٹ لکھتے ہیں۔ بھوجپوری زبان سکھانے کے علاوہ انھون نے عامر کو دو ماہ تک ان کے گھر پر تلفظ اور ادائیگی اور زبان کے نشیب و فراز کی ٹریننگ بھی دی۔

انھیں یہ موقع کیسے ملا اس بارے میں شانتی بھوشن بتاتے ہیں: ’ایک دن اچانک میرے پاس راجکمار ہیرانی کا فون آیا اور مجھ سے پوچھا کہ کیا آپ عامر کو بھوجپوری سکھائيں گے؟ بس وہ دن ہے اور آج کا دن ہے میں ان دنوں کو نہیں بھولتا۔‘

تصویر کے کاپی رائٹ shanti bhushan
Image caption عامر کو بھوجپوری سکھانے والے شانتی بھوشن

عامر خان کے بارے میں ان سے جب پوچھا گیا تو انھوں نے کہا: ’عامر خان بہت ہی عام شخص ہیں اور مجھے لگا ہی نہیں کہ میں ایک سٹار کے ساتھ ہوں۔ کبھی کبھی تو وہ اتنی زیادہ محنت کرتے تھے کہ میں پریشان ہو جاتا تھا۔‘

عامر کے دل میں یہ خیال آیا تھا کہ کردار بھوجپوری زبان بولے، جس سے یہ مزیدار بنے اور لوگ اسے آسانی سے سمجھ بھی سکیں۔

تصویر کے کاپی رائٹ Saira Bano
Image caption دلیپ کمار نے کئی فلموں میں دیہاتی کا کردار ادا کیا ہے لیکن انھوں نے گنگا جمنا میں بطور خاص اس زبان کا استعمال کیا ہے

شانتی بھوشن بتاتے ہیں کہ اس تربیت کے دوران عامر خان کا کہنا تھا کہ کتنا اچھا ہوتا اگر فلموں میں کام کرنے سے پہلے کشمیر سے کنیاکماری تک ایک بار گھوم لیتے۔

وہ اپنی بات ختم کرتے ہوئے کہتے ہیں: ’دیر آئے لیکن درست آئے، اور اب کی بار ایسے آئے کی سب ٹكر ٹكر دیکھتے رہ جائیں گے فلم پی کے میں۔‘

اسی بارے میں