سنجے دت کی پیرول پر رہائی میں توسیع رد

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption سنجے دت کو غیرقانونی ہتھیار رکھنے کے جرم میں پانچ برس قید کی سزا ملی تھی

بھارت میں حکام نے بالی ووڈ کے معروف اداکار سنجے دت کی پیرول پر رہائی کی مدت میں توسیع کی درخواست رد کردی ہے۔

بھارتی حکام نے سنجے دت کو جیل واپس جاکر باقی ماندہ قید کی سزا کاٹنے کا حکم دیا ہے۔ پونے کی جیل کے حکام نے یہ فیصلہ سنجے دت کی بار بار پیرول پر رہائی پر ہونے والی تنقید کے بعد کیا ہے۔

سنجے دت کو غیرقانونی ہتھیار رکھنے کے جرم میں پانچ برس قید کی سزا ملی تھی۔ ان پر الزام تھا کہ انہوں نے ممبئی میں 1993 میں ہونے والے سلسلے وار بم دھماکوں کے مجرموں سے یہ ہتھیار خریدے تھے۔

اس سے پہلے گذشتہ ماہ سنجے دت کو ایک ماہ کے لیے پھر سے پیرول پر رہا کیے جانے کے فیصلے کے خلاف احتجاج کے بعد مہاراشٹر کی ریاستی حکومت نے اس معاملے کی تحقیقات کا حکم دیا تھا۔

سنجے دت نے اپنی اہلیہ مانیتا دت کی بیماری اور ان کے علاج کے سلسلے میں جیل سے باہر آنے کی اجازت مانگی تھی لیکن مانیتا کی کچھ تصاویر سامنے آئی ہیں، جن میں انھیں ایک فلم کی سکریننگ پارٹی میں شریک دیکھا گیا۔

ادھر اس معاملے کا نوٹس لیتے ہوئے مہاراشٹر کے وزیر داخلہ آر آر پاٹل نےسنجے دت کو پیرول دیے جانے کی وجہ کی تحقیقات کروانے کا حکم دے دیا تھا۔

پونے کی يروڈا جیل کے باہر رپبلکن پارٹی آف انڈیا کے کارکنوں نے مظاہرہ کر کے پیرول منسوخ کرنے کا مطالبہ کیا تھا۔

53 سالہ سنجے دت کو 1993 کے ممبئی دھماکوں کے معاملے میں غیر قانونی ہتھیار رکھنے کا مجرم پایا گیا تھا، جس کے بعد انہیں پانچ سال کی سزا سنائی گئی تھی۔

گذشتہ برس سال مئی میں انہیں ممبئی کی آرتھر روڈ جیل سے پونے کی يروڈا جیل منتقل کیا گیا تھا۔

اس سے پہلے سنجے خود اپنی صحت ٹھیک نہ ہونے کی وجہ سے ایک ماہ کے لیے پیرول پر جیل سے باہر آئے تھے جس کے بعد ان کی اہلیہ کی خراب طبیعت کی وجہ سے پھر پیرول دیا جا رہا تھا۔ اس کی مخالفت میں رپبلکن پارٹی کے کارکنوں نے يروڈا جیل کے باہر سیاہ جھنڈوں کے ساتھ مظاہرہ کیا۔ انہوں نے جیل حکام پر سنجے دت سے نرمی برتنے کا بھی الزام لگایا۔

اسی بارے میں