سارہ برائٹمین کی خلائی سفر کی تربیت میں تاخیر

تصویر کے کاپی رائٹ AP
Image caption 54 سالہ گلوکارہ اس سفر کے لیے تین کروڑ 40 لاکھ ڈالر ادا کر رہی ہیں

برطانوی اوپرا گلوکارہ سارہ برائٹمین اپنی خلائی تربیت کا آغاز نہیں کر پائی ہیں جو انھیں انٹرنیشنل سپیس سٹیشن پر جانے کے لیے ضروری ہے۔

برائٹمین روس میں نو مہینوں کی ٹریننگ کے لیے روانہ ہو چکی ہیں تاہم ان کی تربیت میں ایک ہفتے کی تاخیر ہو گئی ہے۔

روسی خلائی ایجنسی پراعتماد ہے کہ وہ اکتوبر میں مجوزہ دس روزہ خلائی دورے کے لیے تیار ہوں گی۔

54 سالہ گلوکارہ اس سفر کے لیے تین کروڑ 40 لاکھ ڈالر ادا کر رہی ہیں تاکہ وہ خلائی سفر پر جانے والی آٹھویں سیاح بن سکیں۔

روسی سپیس ایجنسی کے سربراہ الیکسی کرانزکوف نے روسی خبررساں ایجنسی تاس کو بتایا کہ ’وہ خاندانی وجوہات کے سبب گئی ہیں اور انھوں نے وعدہ کیا ہے کہ وہ اتوار تک واپس آ جائیں گی۔‘

اطلاعات کے مطابق فینٹم آف دا اوپرا کی سٹار سارہ برائٹمین کو نزلہ ہو گیا ہے۔

جمعے کو ایک بیان میں سارہ نے کہا ’اکتوبر میں میرے سفر کے اعلان کے بعد سے یہ سفر بہت ہی دلچسپ ہوگیا ہے اور میں سٹار سٹی میں اپنی تربیت کے لیے بہت پرامید ہوں۔‘

Image caption سارہ برائٹمین کو 1978 میں ان کے نغمے سے شہرت ملی تھی

اگر سارہ برائٹمین یہ تربیت مکمل کر لیتی ہیں اور طبی جانچ بھی کلیئر کر لیتی ہیں تو وہ دس دن تک زمین سے 418 کلومیٹر کے فاصلے پر قائم بین الاقوامی خلائی سٹیشن پر موسم خزاں گزاریں گی۔

برائٹمین نے اپنا کریئر کی ابتدا ڈانس ٹروپ ہاٹ گوسپ کے ساتھ کی تھی اور اس کا ایک گیت ’آئی لاسٹ مائی ہارٹ ٹو اے سٹارشپ ٹروپر‘ سنہ 1978 میں بہت مقبول ہوا تھا۔

اس کے بعد وہ اپنے سابق شوہر اینڈریو لائڈ ویبر کے ساتھ کئی میوزیکل میں آئیں اور بے حد مقبول ہوئیں۔

انھوں نے سنہ 2012 میں جب اپنے خلائی مشن کا راز ظاہر کیا تو کہا ’یہ سفر ایک خواب ہے۔ میرا خواب ہے۔ اور اب یہ ایک حقیقت بن سکتا ہے۔ میں نے اپنی زندگی میں جتنی بھی چیزیں کی ہیں ان میں سے سب سے زیادہ اس کے متعلق پرجوش ہوں۔‘

اسی بارے میں