’قوالی کے لائیو شو کی ڈیمانڈ بڑھ گئی ہے‘

تصویر کے کاپی رائٹ Ayush

بھارت کے شہر ممبئی میں نومبر سنہ 2008 کے حملے کے بعد پاکستانی فنکاروں کے لیے بھارت میں آ کر کام کرنا مشکل ہو گیا ہے۔

پاکستان کے نامور گلور کار راحت فتح علی نے بی بی سی ہندی کو ایک انٹرویو دیتے ہوئے کہا ’اب ہم گانے میوزیک ڈائریکٹرز کے ساتھ سكايپ پر بیٹھ کر ڈسکس کرتے ہیں لیکن اس میں وہ بات نہیں جو ایک سٹوڈیو میں آ منے سامنے ریکارڈ کرنے میں ہے۔‘

ایک مثال دیتے ہوئے راحت کہتے ہیں، ’اب بجرنگی بھائی جان کے لیے ہم نے مکھڑا گایا، اپروو کروایا پھر جب گانے کی باری آئی تو موڈ تبدیل کر دیا گیا، محسوس ہوا کہ مکھڑے کو تبدیل کیا جا رہا ہے، کتنی ہی بار ایسا بھی ہوا ہے کہ گانے پورے نہ ہونے کی وجہ سے فلم سے گانا ہٹانا پڑا۔‘

پاکستانی گلوکار راحت فتح علی خان کا تعلق جس گھرانے سے ہے وہاں استاد نصرت فتح علی خان اور ان کے والد استاد فتح علی خان جیسے گلوکاروں کی روایت رہی ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ rahat fateh ali khan

قوالی کو ایک مختلف مقام دینے والے اس گھرانے میں نصرت فتح علی خان کے بعد ان کے وارث راحت فتح علی بنے اور وہ قوالی کے مستقبل کو روشن مانتے ہیں۔

راحت نے کہا ’ہم نے قوالی کو امپرووائز کیا ہے، آج جس طرح کے گانے بن رہے ہیں چاہے وہ کتنے ہی رومانٹک کیوں نہ ہو، قوالی کے سر ان شامل کرنے سے وہ گانے ایک الگ ہی سطح پر پہنچ جاتے ہیں۔‘

انھوں نے بتایا کہ آج صرف پاکستان اور بھارت میں ہی نہیں بلکہ دنیا میں بھی قوالی کے لائیو شو کی ڈیمانڈ بہت بڑھ گئی ہے۔

راحت کو اس بات کی خوشی ہے کہ بھارت میں پاکستانی گلوکاروں کو گانے کا موقع ملتا ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ rahat fateh ali khan

انھوں نے کہا کہ بھارت میں آج موسیقی میں جو سب سے اچھا کام کر رہے ہیں وہ ہیں وشال بھردواج اور ساجد علی واجد علی کی جوڑی۔ وہ کہتے ہیں ’یہ لوگ اپنے کلچر کو سمجھ کر موسیقی بناتے ہیں۔‘

اپنے چچا نصرت فتح علی خان کو یاد کرتے ہوئے راحت بتاتے ہیں ’ وہ بہت غصے والے تھے، پرسکون رہتے تھے لیکن تبھی تک جب تک کوئی غلطی نہیں ہوتی تھی. ایک بار ہارمونیم کے ریاض میں مجھ سے ایک حرکت نہیں لگ رہی تھی، وہ ڈانٹ مجھے آج بھی یاد ہے۔‘

تصویر کے کاپی رائٹ rahat fateh ali khan

راحت نے بتایا کہ نصرت فتح علی خان گائیکی کو لے کر اتنے حساس تھے کہ ان کے سامنے گانا تو دور کوئی منہ بھی نہیں کھولتا تھا لیکن اگر ان کا ڈر تھا تو ان کے گانے کی عزت بھی اتنی ہی تھی اور ہے۔ وہ اسے بہت بڑی ذمہ داری مانتے ہیں، وہ آج بھی اپنے استاد نصرت فتح علی خان کی کمی محسوس کرتے ہیں۔

اسی بارے میں