شطرنج کے کھلاڑی کی آخری چال

Image caption سعید جعفری نے 100 سے زیادہ ہندی فلموں میں اداکاری کی

بھارت کے ہرفن مولا سینیئر اداکار سعید جعفری کا اتوار کے روز انتقال ہو گیا۔ وہ 86 سال کے تھے۔ ’شطرنج کے کھلاڑی‘ فلم کے لیے انھیں بہترین معاون اداکار کے اعزاز سے نوازا گیا تھا۔

ان کی بھتیجی شاہین نے جب اپنے فیس بک پر یہ خبر دی تو ان کے فن کے چاہنے والے صدمے میں آ گئے۔ اس کے بعد بھارتی وزیر اعظم کے دفتر سے ان کی موت پر پیغام جاری کیا گيا جس میں انھیں خراج عقیدت پیش کیا گیا۔

سعید جعفری اپنی متنوع اداکاری کے لیے معروف تھے۔ ان کی یادگار فلموں میں ’شطرنج کے کھلاڑی،‘ ’چشم بد دور،‘ ’گاندھی‘ اور ’اے پیسج ٹو انڈیا‘ وغیرہ شامل ہیں۔

سعید جعفری پہلے بھارتی اداکار تھے جنھیں ڈرامے میں ان کی خدمات کے اعتراف میں ’آرڈر آف دا برٹش امپائر‘ دیا گیا۔ انھیں بیرون ملک انتہائی قدرو منزلت کی نگاہ سے دیکھا جاتا تھا۔

انھوں نے ریچرڈ ایٹن برو کی فلم ’گاندھی‘ میں سردار پٹیل کا کردار نبھایا تھا۔

سعید جعفری بھارتی پنجاب کے شہر مالیر کوٹلہ میں پیدا ہوئے تھے اور انھوں نے علی گڑھ مسلم یونیورسٹی میں تعلیم حاصل کی۔

انھوں نے اداکارہ مدھر جعفری سے شادی کی تھی جن سے ان کے تین بچے ہیں۔ ان سے علیحدگی کے بعد انھوں نے اپنی ہدایت کار جینیفر سکوریل سے شادی کی۔

انھوں نے معروف ٹی وی سیریز ’تندوری نائٹس،‘ ’دا فار پویلیئنز‘ اور ’دی جیول ان دا کراؤن‘ میں اداکاری کی۔ انھوں نے معروف ہالی وڈ اداکار شان کونری، مائیکل کین اور پیئرس بروسنن کے ساتھ بھی فلمیں کیں۔

ان کی فلموں میں ’معصوم،‘ ’جدائی،‘ ’عجوبہ،‘ ’دل،‘ ’رام تیری گنگا میلی ہو گئی،‘ ’حنا،‘ ’رام لکھن،‘ ’خون بھری مانگ،‘ اور ’نصیب‘ وغیرہ شامل ہیں۔

تصویر کے کاپی رائٹ Shaheen Aggarwal Facebook Page
Image caption سعید جعفری پہلے بھارتی اداکار تھے جنھیں ڈرامے میں ان کی خدمات کے اعتراف میں ’آرڈر آف دا برٹش امپائر‘ دیا گیا

سعید جعفری کے انتقال پر ہدایت کار مہیش بھٹ نے بی بی سی سے بات کرتے ہوئے کہا: ’سعید صاحب کے اندر جو غیر ملکی اور دیسی کلچر کا مرکب تھا وہ اس کے لیے جانے جاتے تھے۔ فلم ’رام تیری گنگا میلی‘ میں ان کا اداکاری میں کبھی نہیں بھول سکتا۔‘

بھٹ کہتے ہیں: ’اگرچہ میں انھیں کبھی قریب سے نہیں جان پایا پر ہمیشہ ان کے فن کی قدر کی۔ بالی وڈ فلم انڈسٹری ان کی اداکاری کو ہمیشہ یاد رکھے گی۔‘

ڈائریکٹر شیام بینیگل نے کہا: ’میں یہ خبر سن کر انتہائی افسردہ ہوں، بہت ساری يادیں ہیں جو ان کے ساتھ منسلک ہیں۔ یہ خبر میرے لیے انتہائی افسوسناک ہے۔‘

فلم ’چشم بددور‘ میں سعید جعفری کے ساتھ کام کرنے والے راکیش بیدی نے کہا: ’بھارت میں ہی نہیں بلکہ تفریح کی پوری دنیا نے ایک بہترین آرٹسٹ کھو دیا ہے۔ ہماری فلم ’چشم بددور‘ آج بھی لوگوں کے دلوں پر راج کرتی ہے۔‘

بیدی کہتے ہیں: ’وہ بہت ہی سادہ انسان تھے۔ وہ ان فنکاروں میں سے تھے جو ہر طرح کے رول میں خود کو ڈھال لیتے ہیں۔‘

سعید جعفری نے تھیئٹر سے اپنے کریئر کی ابتدا کی تھی اور پھر دہلی میں اپنی ایک تھیئٹر کمپنی بھی شروع کی تھی۔ بعد میں وہ رائل اکیڈمی آف ڈرامیٹک آرٹس میں چلے گئے۔

سعید جعفری نے بی بی سی کی مختلف سروسز کے لیے بھی کئی پروگرامز کیے تھے۔ انھوں نے بی بی سی ورلڈ سروس میں کام کرنے کے علاوہ ہیرڈز میں سیلز مین کی بھی نوکری کی۔

سعید جعفری نے ایک بار بی بی سی کے ہارڈ ٹاک میں کہا تھا کہ ’بھارت میں مقدار ہے جبکہ برطانیہ میں معیار ہے۔‘

وہ اپنی اداکاری کے علاوہ اپنے لہجے اور شستہ زبان کے لیے بھی یاد کیے جائیں گے۔

اسی بارے میں