دلیپ کمار کے لیے پدم وبھوشن ایوارڈ

تصویر کے کاپی رائٹ BJPRajnathSingh
Image caption بھارت کے وزیر داخلہ راج ناتھ سنگھ نے دلیپ کمار کے گھر جا کر انھیں پدم وبھوشن ایوارڈ سے نوازا

بھارت کے معروف اداکار دلیپ کمار کو اتوار کے روز بھارت کے دوسرے سب سے بڑے شہری اعزاز ’پدم وبھوشن‘ سے نوازا گیا۔

بھارت کے وزیر داخلہ راج ناتھ سنگھ نے اتوار کو ممبئی میں دلیپ کمار کے گھر جا کر انھیں یہ ایوارڈ دیا۔

خیال رہے کہ یہ ایوارڈ انھیں ان کے 93 ویں یوم پیدائش کے دو دن بعد دیا گیا ہے۔

اس سے قبل راج ناتھ سنگھ نے ٹویٹ کیا تھا کہ وہ ممبئی پہنچ گئے ہیں اور ’بھارتی سینیما میں گرانقدر خدمات کے اعتراف میں دلیپ کمار کو ایوارڈ دیں گے۔‘

دلیپ کمار اپنی علالت کی وجہ سے اپریل میں یہ ایوارڈ لینے دہلی نہیں جا سکے تھے۔

Image caption فلم گوپی میں دلیپ کمار اور سائرہ بانو ایک ساتھ آئے ہیں

اس سے قبل انھوں نے جمعے کو اپنا 93 واں یوم پیدائش نہ منانے کا فیصلہ کیا تھا اور یہ فیصلہ ان کی اہلیہ اور اداکارہ سائرہ بانو کے مطابق چینئی کے سیلاب اور بارش کے متاثرین کے ساتھ اظہار یکجہتی کے طور پر کیا گیا تھا۔

دلیپ کمار نے پاکستان کے شہر پیشاور میں ان کا یوم پیدائش منانے والوں کا شکریہ ادا کیا۔

خیال رہے کہ دلیپ کمار پیشاور میں پیدا ہوئے تھے اور انھیں پاکستان کے سب بڑے شہری اعزاز ’نشان امتیاز‘ سے نوازا جا چکا ہے۔

دلیپ کمار بھارت کے سب سے زیادہ ایوارڈ حاصل کرنے والے اداکار ہیں۔ انھیں آٹھ بار فلم فيئر کی جانب سے بہترین اداکار کے ایوارڈ سے نوازا جا چکا ہے۔ جبکہ انھیں گراں قدر دادا صاحب پھالکے سمیت کئی دوسرے سرکاری ایوارڈ سے نوازا جا چکا ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ Mohan Churiwala
Image caption دلیپ کمار، دیوانند اور راج کپور کا ایک عرصے تک موازنہ ہوتا رہا پھر امیتابھ اور دلیپ کمار کے بارے میں یہی باتیں سامنے آنے لگیں

دہلی کے صحافی آدیش کمار گپت نے کہا کہ ’دلیپ کمار کو یہ ایوارڈ بہت پہلے مل جانا چاہیے تھا۔ ایسی حالت میں ایوارڈ ملنا اہمیت کھو دیتا ہے کہ جب ایوارڈ کا احساس جاتا رہے یا شخصیت ایوارڈ سے بڑی ہو جائے۔‘

دلیپ کمار نے سنہ 1944 میں فلم ’جوار بھاٹا‘ سے اپنے کریئر کا آغاز کیا تھا۔ ان کا فلمی کریئر چھ دہائیوں سے زیادہ عرصے پر محیط ہے لیکن انھوں نے اس دوران 60 سے کچھ زیادہ فلمیں ہی کیں۔

تصویر کے کاپی رائٹ BBC World Service
Image caption اس تصویر میں بھارتی فلم انڈسٹری کے تین دور کے معروف اداکار ہیں

انھیں ’ٹریجڈی کنگ‘ اور ’شہنشاہ جذبات‘ جیسے القاب سے یاد کیا جاتا ہے۔

انھوں نے اپنے پہلے دور میں انداز، دیدار، دیوداس، آزاد، مغل اعظم، کوہ نور، گنگا جمنا، رام اور شیام، نیا دور، آن، داستان، دل دیا درد لیا، بیراگ، گوپی جیسی فلمیں کیں اور پھر اپنے دوسرے دور میں کرانتی، شکتی، ودھاتا، مزدور، مشعل، دنیا، کرما اور سوداگر جیسی فلموں میں اپنی اداکاری کے جوہر دکھائے۔

اسی بارے میں