BBCUrdu.com
  •    تکنيکي مدد
 
پاکستان
انڈیا
آس پاس
کھیل
نیٹ سائنس
فن فنکار
ویڈیو، تصاویر
آپ کی آواز
قلم اور کالم
منظرنامہ
ریڈیو
پروگرام
فریکوئنسی
ہمارے پارٹنر
آر ایس ایس کیا ہے
آر ایس ایس کیا ہے
ہندی
فارسی
پشتو
عربی
بنگالی
انگریزی ۔ جنوبی ایشیا
دیگر زبانیں
 
وقتِ اشاعت: Sunday, 25 January, 2009, 23:02 GMT 04:02 PST
 
یہ صفحہ دوست کو ای میل کیجیئے   پرِنٹ کریں
غریب نگر کا سچ
 

 
 
روبینہ
روبینہ نے فلم ’سلم ڈاگ ملینیئر‘ میں ہیروئین کے بچپن کا کردار نبھایا ہے
ممبئی کے باندرہ ریلوے سٹیشن سے متصل جھونپڑ پٹی میں جہاں جگہ جگہ کچرے کا انبار ہے، چھوٹی چھوٹی گلیوں اور بہتی گندی نالیوں کو عبور کر کے غیر ملکی ذرائع ابلاغ کے نمائندے اُس ایک چھوٹی بچی کو ڈھونڈھ رہے ہیں جس نے برطانوی ہدایت کار ڈینی بوئل کی فلم ’سلم ڈاگ ملینیئر‘ میں اداکاری کی ہے۔فلم کو آسکر ایوارڈز میں دس زمروں میں نامزدگی کیا حاصل ہوئیں غریب نگر کی قمست ہی بدل گئی۔

ریل کی پٹریوں پر بیٹھے لوگ گپیں ہانک رہے، کبھی کبھی وہاں سے مال گاڑی بھی گزرتی ہے، کچھ لوگ تو پٹریوں پر اس لیے بھی بیٹھے ہیں کہ گھروں میں ہوا نہیں ہے۔ وجہ! وہاں کوئی کھڑکی یا روشن دان ہی نہیں ہے۔ یہ مکان چھ یا آٹھ مربع سکوائر فٹ کے ہیں جن کی دیواریں اور چھت سب ٹین کے ہیں۔ یہاں ہر جگہ کچرے کا انبار ہے۔ سامنے ہر منٹ پر گزرتی لوکل ٹرین اور پلیٹ فارم پر جمع لوگوں کا اژدہام۔ ننگے پیر کھیلتے بچے۔ انہی کے درمیان رہنے والی ایک چھوٹی بچی آج سٹار کا درجہ حاصل کر چکی ہے۔

پہلا قدم
 ڈینی انکل بہت اچھے ہیں انہوں نے بڑے سکول میں داخلہ دلوایا ہے
 
روبینہ

نو سالہ روبینہ رفیق قریشی آج کل سب کی توجہ کا مرکز بن گئی ہے۔اس نے فلم میں ہیروئین کے بچپن کا کردار نبھایا ہے۔ تنگ و تاریک گلیوں پر مشتمل کچی بستی میں داخل ہوتے ہی اگر آپ صرف یہ پوچھ لیں کہ روبینہ کہاں رہتی ہے تو لوگ آپ کو اس کے گھر تک پہنچانے میں خوشی محسوس کریں گے۔گلی کے آخر میں سب سے آخری گھر روبینہ کا ہے۔ سامنے گندی نالی ہے۔ آپ کا پیر ذرا سا لڑکھڑایا اور آپ نالی کے اندر۔

روبینہ جو کبھی باندرہ کے سرکاری سکول میں جاتی اور اردو پڑھتی تھی اب انگریزی سکول جاتی ہے۔’ڈینی انکل بہت اچھے ہیں انہوں نے بڑے سکول میں داخلہ دلوایا ہے۔‘

بڑی بڑی آنکھوں والی روبینہ سکول سے ابھی واپس آئی ہے، کھانا بھی نہیں کھایا کہ پہلے سے انتظار کر رہے میڈیا کے لوگوں کے سوالات کا جواب بہت ہی خوشدلی کے ساتھ دینے کے لیے تیار ہے۔

غریب نگر کی جھونپڑ پٹی
غریب نگر کی جھونپڑ پٹی جہاں روبینہ رہتی ہے

فلم میں کام کرنے کے بعد روبینہ اور اس کے گھر کی قسمت بدل گئی۔حالانکہ گھر کی چھت اور دیوار ابھی بھی ٹین کی ہے لیکن اس پر رنگ و روغن لگا ہے۔ رنگین ٹی وی آگیا ہے اور روبینہ اب انگریزی میں کچھ جملے بھی بول لیتی ہے۔
روبینہ کے والد کو فخر ہے کہ آج ان کی بچی کی وجہ سے غریب نگر کو ایک پہچان ملی ہے۔

روبینہ بڑی ہو کر فلم سٹار بننا چاہتی ہے۔ وہ سمجھتی ہے کہ اسی شعبہ نے تو اس کی زندگی بدل دی ہے۔

روبینہ اب بھی اپنے دوستوں کے ساتھ میدان میں کھیلتی ہے لیکن اب اس میں یہ احساس جاگ گیا ہے کہ یہ جگہ گندی ہے اور اسے صاف ستھرا رہنا چاہئے۔

روبینہ کی بہت سی سہلیاں ہیں جن کے ساتھ وہ کھیلا کرتی ہے لیکن ان کی تقدیر روبینہ کی طرح انہیں ہے۔ مسکان شیخ نے بھی روبینہ کی طرح شوٹنگ میں حصہ لیا تھا لیکن وہ صرف ننگ دھڑنگ غریب میلے کچیلے بچوں کی بھیڑ کا حصہ تھی۔

فلم کے ہیرو جمال کے بھائی سلیم کے بچپن کا کردار دس سالہ اظہرالدین نے نبھایا ہے جو کھلے آسمان میں کپڑے اور لکڑی کی بنی دیواروں سے بنے جھوپڑے میں اپنی ماں اور شرابی باپ کے ہمراہ رہتا ہے۔ پتھریلی زمین پر وہ اب بھی سوتا ہے۔گٹر کی پائپ لائن کے اندر سے گزر کر وہ ریلوے پلیٹ فارم پر منٹوں میں پہنچ جاتا ہے۔ چنچل اور شوخ اظہر ابھی بھی ننگے پیر ہی اپنے دوست ارباز کے ساتھ دوڑتا پھرتا ہے۔

’ریل کی پٹریوں پر ریس لگانا اور چھپا چھپی کھیلنا اچھا لگتا ہے لیکن اب میں پڑھنا چاہتا ہوں اور پڑھ لکھ کر سلمان خان بنوں گا۔‘

فلم ’سلم ڈاگ ملینیئر‘ میں کچی بستیوں کی حقیقی تصویر پیش کرنے کی ڈینی کی کوششوں پر ملک بھر میں تنقید کی جا رہی ہے لیکن حقیقت تو یہ ہے کہ روبینہ ، اظہر، مسکان اور ارباز کی طرح ممبئی میں لاکھوں بچے جس طرح کی زندگی اب تک گزار رہے ہیں وہ فلم میں دکھائی گئی تصویر سے زیادہ بھیانک ہے۔

 
 
اسی بارے میں
بیرونی لِنک
بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے
تازہ ترین خبریں
 
 
یہ صفحہ دوست کو ای میل کیجیئے   پرِنٹ کریں
 

واپس اوپر
Copyright BBC
نیٹ سائنس کھیل آس پاس انڈیاپاکستان صفحہِ اول
 
منظرنامہ قلم اور کالم آپ کی آواز ویڈیو، تصاویر
 
BBC Languages >> | BBC World Service >> | BBC Weather >> | BBC Sport >> | BBC News >>  
پرائیویسی ہمارے بارے میں ہمیں لکھیئے تکنیکی مدد