الزامات کی تفتیش کی جائے: ششی تھرور

ہندوستان کے سابق نائب وزیر خارجہ ششی تھرور نے اپنے عہدے سے مستعفی ہونے کے بعد پہلی بار پارلیمان سے خطاب کرتے ہوئے کہا ہے کہ ان پر عائد الزامات کی تفتیش کی جائے۔

ششی تھرور نے اتوار کی رات اپنے عہدے سے استعفی دیا تھا

آئی پی ایل میں مالی بے ضابطیوں کے رونماء ہونے کے بعد ششی تھرور نے اپنے عہدے سے استعفیٰ دے دیا تھا۔

اپنے عہدے سےمستعفی ہونے کے بعد منگل کو پارلیمان میں بیان دیتے ہوئے ششی تھرور نے کہا’ میں نے وزير اعظم منموہن سنگھ سے گزارش کی ہے کہ مجھ پر عائد سبھی الزامات کی تفتیش ہو۔‘

جمعہ کو حزب اختلاف کی جماعتوں کی جانب سے ہنگامہ آرائی کے سبب ششی تھرور پارلیمان میں اپنا بیان نہیں پیش کر پائے تھے حالانکہ سپیکر میرا کمار نے ان سے کہا تھا کہ وہ اپنا تحریری بیان پارلیمان میں پیش کریں۔

اپنے بیان میں تھرور نے کہ ’ایک لمبے وقت سے میں عالمی سطح پر عوامی سروسز سے منسلک رہا ہوں اور میرا اوپر کبھی کوئی الزام نہیں لگا۔‘

ان کا کہنا تھا کہ وہ ہندوستان کی سیاست میں نئے ہیں لیکن ان کا مقصد ملک کی خدمت کرنا ہے اور انہیں جذبات کے ساتھ وہ سیاست میں داخل ہوئے۔

کیرالہ کے شہر کوچی کے نام سے منسوب آئی پی ایل کی ایک نئی ٹیم سے ششی تھرور کی وابستگی شک و شبہہ کے دائرے میں آگئی تھی اور الزام لگایا جا رہا تھا کہ اس ٹیم کے حق میں اپنا اثر و رسوخ استعمال کرنے کے عوض اس ٹیم میں ششی تھرور کی ایک دوست سنندا پشکر کو ستر کروڑ روپے کے شیئر دیے گئے ہیں۔

کہا جا رہا تھا کہ سنندا پشکر دراصل تھرور کی ’پراکسی‘ ہیں یا ان کی جانب سے کام کر رہی ہیں۔

تھرور نے پارلیمان میں ایک وضاحتی بیان بھی دیا تھا لیکن حزب اختلاف اور خود کانگریس کے اندر بعض حلقے ان کی وضاحت سے مطمئن نہیں ہوئے تھے۔

تھرور اقوام متحدہ کے سابق نائب سیکریٹری جنرل ہیں جنہوں نے گزشتہ برس کے پارلیمانی انتخابات کے ساتھ ہی اپنے سیاسی کیریئر کا آغاز کیا تھا۔ تب سے ہی وہ کسی نہ کسی تنازعہ میں گھرے رہے ہیں۔

تھرور کو سوشل نیٹ ورکنگ کی سائٹ ٹویٹر پر اپنے کمنٹس شائع کرنے کا بہت شوق ہے اور اپنی بے باکی کی وجہ سے وہ پہلے بھی کئی مرتبہ مشکلات میں گھرے ہیں۔

کوچی کی ٹیم سے متعلق پورے تنازعہ کا آغاز بھی ٹویٹر سے ہی ہوا جب آئی پی ایل کے چیئرمین للت مودی نے اس ویب سائٹ پر کوچی کے شیئر ہولڈرز کی تفصیلات شائع کر دیں۔ اور اس کے بعد الزام لگایا کہ ششی تھرور نے ان سے کوچی کے مالکان کی تفصیلات عام نہ کرنے کی درخواست کی تھی۔ کمپنی کے مالکان میں سنندا پشکر کا نام آنے کے بعد حالات تیزی سے بگڑتے گئے اور آخر کار ششی تھرور کو مستعفی ہونا پڑا۔

رات دیر گئے صدر پرتیبھا پاٹل نے ان کا استعفیٰ منظور کر لیا ہے جبکہ سنندا پشکر نے ایک بیان جاری کرکے کہا ہےکہ وہ کوچی کی ٹیم میں اپنے شیئر’رضاکارانہ’ طور پر واپس کر رہی ہیں۔

اسی بارے میں