امریکہ:’ٹیکسٹ پیغام بات چیت کا متبادل‘

کال کے بجائے اب میسیجز بھیجنے کا چلن بڑھ گیا ہے امریکہ میں ایک تازہ جائزے کے مطابق نوجوان نسل میں میں پیغام رسانی کاسب سے مقبول طریقہ موبائل فون سے ٹیکسٹ پیغامات کا تبادلہ ہے۔

’پیو انٹرنیٹ‘ اور ’امریکن لائف پروجیکٹ‘ نے اس بارے میں ایک مشترکہ سروے کیا ہے جس سے معلوم ہوا ہے کہ رابطے کے لیے بچوں میں موبائل فون پر تحریری پیغام رسانی اس قدر مقبول ہے کہ پہلی بار ان میں فون کال کرنے کا رواج کم ہوتا دیکھا گیا ہے۔

اس سروے کے مطابق تیس فیصد سے بھی زیادہ نوجوان نسل نے موبائل فون سے ایک دن میں سو سے بھی زائد تحریری پیغام بھیجے ہیں۔

ریسرچ کے مطابق امریکہ میں فون کمپنیوں کے مفت تحریری پیکج دینے کے سبب بھی پیغامات بھیجنے میں اضافہ ہوا ہے جب کہ یہ سہولیات دوسرے ممالک میں بہت کم ہیں۔

نئے سروے کے مطابق دوتہائی نو جوان نسل اپنے دوستوں کو فون کال کرنے کے بجائے انہیں تحریری پیغام بھیجنے کو زیادہ ترجیح دیتے ہیں۔

اس میں بھی لڑکیاں تیس کے مقابلے اسّی زیادہ میسیجز بھیجتی یا وصول کرتی ہیں۔

اس رپورٹ کو تیار کرنے میں شامل ایک خاتون امانڈہ لینہارٹ کا کہنا ہے ’ آج کل نو جوان نسل میں تحریری پیغام رسانی کمیونکیشن کا اہم مرکز ہے اور گزشتہ اٹھارہ ماہ میں اس زبردست اضافہ ہوا ہے‘۔

ان کا مزید کہنا تھا’ بڑے پیمانے پر تحریری پیغام کے لیے مفت سہولیات دینے کی وجہ سے امریکی نوجوانوں کے پیغام رسانی میں اس طرح کی تبدیلیاں آئی ہیں‘۔

اس تحقیق کے مطابق نوخیز جوان تحریری پیغام رسانی کو اس لیے بھی ترجیح دیتے ہیں کیونکہ وہ ماں باپ کے سامنے رہ کر بھی ایسا کرسکتے ہیں جبکہ فون پر بات کرنا مشکل ہوتا ہے۔

لیکن اس سروے سے یہ بات بھی سامنے نکل کر آئی ہے کہ نوجوان ماں باپ کو فون کال کے ذریعے بات چیت کرنا پسند کرتے ہیں اور انھیں میسیجز نہیں کرتے۔

اسی بارے میں