ممبئی کااوبرائے ہوٹل کھل گیا

اٹھارہ ماہ پہلے شدت پسندی کا نشانہ بننے والا ممبئی کا مشہور اوبرائے ہوٹل دوبارہ کھل گیا ہے۔

Image caption ہوٹل کو چھبیس نومبر سنہ دو ہزار آٹھ میں ممبئی میں ہونے والے حملوں میں شدید نقصان پہنچا تھا۔

چھبیس نومبر 2008 کو ممبئی پر ہونے والے حملے میں ممبئی کے مشہور تاج محل اور اوبرائے ہوٹل کو نشانہ بنایا گیا تھا۔ ہوٹل کو شدت پسندوں سے خالی کرانے کے عمل کے دوران شدید نقصان پہنچا تھا۔

ممبئی پر ہونے والے اس حملے میں ایک سو ستر افراد ہلاک ہوگئے تھے جس میں اوبرائے ہوٹل کے عملے کے تیس افراد بھی شامل تھے۔

اوبرائے ہوٹل کی تزئین و آزائش پر پینتیس ملین ڈالر کا خرچ آیا ہے۔ ہوٹل کے کھلنے سے پہلے بی بی سی کے بین رچرڈسن نے ہوٹل کے دورے کے بعد بتایا کہ ہوٹل کا باروری عملہ سنگ مرمر کے فرش پر تیرتا ہوا نظر آتا ہے۔

دہشتگردوں کے حملے کے بعد اوبرائے ہوٹل کی دیواروں پر آگ اور گولیوں کے نشان واضع تھے لیکن اب اسی ہوٹل میں گولیوں کی گھن گرج کی بجائے جگہ پیانو کی آواز گونجنا شروع ہو چکی ہے۔

اوبرائے ہوٹل کی انتظامیہ کو امید ہے کہ وہ نہ صرف وہ ایک بار پھر اپنے پرانےگاہکوں کو اپنے طرف متوجہ کرنے میں کامیاب رہے گا بلکہ نئے گاہک بھی اوبرائے ہوٹل آئیں گے۔ہوٹل انتظامیہ کو یقین ہے کہ اس کے مہمانوں کی تعداد جلد 2008 کے درجے پر پہنچ جائے گی جبکہ اس کے ریسٹورانٹ پہلے ہی مکمل پر بک ہو چکے ہیں۔

اسی بارے میں