سعید کی نظر بندی ختم، ہندوستان مایوس

حافظ سعید
Image caption ہندوستان کا ماننا ہے کہ حافظ سعید ممبئی حملوں کے ماسٹر مائنڈ ہیں

ہندوستان نے پاکستان کے سپریم کورٹ کی جانب سے کالعدم تنظیم جماعت الدعوہ کے سربراہ حافظ سعید کی نظر بندی کے خلاف دائر اپیل مسترد کرنے کے فیصلے کو افسوسناک قرار دیا ہے

ہندوستان کی خارجہ سیکریٹری نروپما راؤ نے ایک پریس کانفرنس میں کہا ہے ' ہمیں اس فیصلے پر افسوس ہے۔' انکا کہنا تھا سب جانتے ہیں کہ حافظ سعید ایک ممنوعہ جماعت کے سربراہ ہیں اور ' ہم حافظ سعید کو ممبئی حملوں کا ماسٹر مائنڈ مانتے ہیں'۔

انکا مزید کہنا تھا کہ حافظ سعید کے ممبئی حملوں میں ملوث ہونے کے ثبوت ہندوستان پاکستان کو دے چکا ہے اور یہ ثبوت کاروائی کرنے کے لیے کافی ہیں۔

انکا کہنا تھا کہ ' ہم امید کرتے ہیں کہ پاکستان حافظ سعید کے خلاف کاروائی کرے گا'۔

یاد رہے کہ چھبیس نومبر سنہ دوہزار آٹھ کو ممبئی حملوں کے بعد حافظ سعید کی نظر بندی اقوام متحدہ کی قرارداد کے بعد عمل میں لائی گئی تھی۔ تاہم اس نظر بندی کے خلاف دائر درخواست پر لاہور ہائی کورٹ نے جون سنہ دوہزار نو میں اُن کی نظر بندی ختم کرنے کے احکامات دیے تھے۔

حافظ محمد سعید کی نظر بندی ختم کرنے سے متعلق لاہور ہائی کورٹ کے فیصلے کے خلاف دائر نظرثانی کی درخواستیں وفاق اور پنجاب حکومت کی طرف سے دائر کی گئی تھیں۔

درخواست گُزاروں کی طرف سے ثبوت پیش نہ ہونے پر عدالت نے لاہور ہائی کورٹ کے فیصلے کے خلاف درخواستیں مسترد کردیں۔

بھارتی حکومت کی طرف سے یہ الزام عائد کیا جا رہا ہے کہ حافظ سعید ممبئی حملوں کے ماسٹر مائنڈ ہیں۔

.

اسی بارے میں