جرمن بیکری دھماکہ:’میرا بیٹا بےقصور ہے‘

بیٹا ایسا کوئی کام کر ہی نہیں سکتا: ریحانہ پونے کی جرمن بیکری میں ہونے والے دھماکے کے مشتبہ ملزم عبدالصمد بھٹکل کی والدہ کا کہنا ہے کہ ان کا بیٹا بے قصور ہے۔

صمد کو منگلور ہوائی اڈے پر مہاراشٹر اے ٹی ایس عملہ نے پیر کے روز اس وقت گرفتار کیا جب وہ ایئر انڈیا کے طیارے سے دبئی سے منگلور پہنچے تھے اور ان کے بارے میں مرکزی وزیر داخلہ پی چدمبرم نے اپنے بیان میں کہا تھا کہ وہ پونے دھماکہ کے مشتبہ ملزم ہیں۔

صمد کی والدہ ریحانہ اور ان کے چچا ممبئی میں ہیں اور انہوں نے ایڈوکیٹ مبین سولکر سے صمد کے کیس کی پیروی کرنے کے سلسلہ میں ملاقات کی ہے۔

بی بی سی اردو کی ریحانہ بستی والا کے مطابق مبین سولکر کی رہائش گاہ پر ان سے ملاقات کے بعد ریحانہ نے میڈیا کو بتایا کہ جس وقت پونے میں بم دھماکہ ہوا ان کا بیٹا گھر پر ہی موجود تھا۔ ان کے مطابق گھر میں کسی کی شادی کی تیاریاں چل رہی تھیں اور وہ اس میں شریک تھا ا س لیے اس کا پونے جانے کا سوال ہی نہیں اٹھتا ہے۔

ریحانہ کو یقین ہے کہ ان کا بیٹا ایسا کوئی کام کر ہی نہیں سکتا۔ لیکن پولیس کو شبہ ہے کہ صمد پونے دھماکہ کا مشتبہ ملزم ہے۔

Image caption پولیس کا کہنا ہے کہ بھٹکل پونے دھماکے کا ماسٹر مائنڈ ہے

وکیل مبین سولکر نے، جو اس سے قبل گھاٹ کوپر بم دھماکے سمیت کئی مبینہ شدت پسند ملزمان کے کیس کی پیروی کر چکے ہیں، بتایا کہ ابھی انہوں نے اس کیس کی پیروی کے بارے میں حتمی فیصلہ نہیں کیا ہے۔ ان کے مطابق ابھی دوسری میٹنگ جمعرات کو ہو گی اور انہیں یہ یقین ہو جائے گا کہ صمد بے قصور ہے تو وہ یہ کیس لڑنے کے لیے تیار ہوں گے۔

سولکر نے یہ وضاحت کی کہ صمد کے گھر والوں نے ان کی بے گناہی کے کچھ ثبوت انہیں دیے ہیں۔ جن کی جانچ پڑتال کے بعد وہ فیصلہ کریں گے۔

صمد کو حالانکہ اے ٹی ایس نے ابھی سنہ دو ہزار نو کے اسلحہ فراہمی کیس میں گرفتار کیا ہے لیکن پولیس حراست میں ان سے پونے دھماکہ کے بارے میں تفتیش جاری ہے۔اے ٹی ایس ذرائع کا کہنا ہے کہ پولیس یہ جاننے کی بھی کوشش میں ہے کہ مبینہ شدت پسند تنظیم انڈین مجاہدین کا انڈر ورلڈ سے تو کوئی رابطہ تو نہیں کیونکہ صمد پر مبینہ طور پر گزشتہ برس انڈرورلڈ کے اراکین کو اسلحہ فراہم کرنے کا الزام ہے۔

پولیس کے مطابق انہیں جرمن بیکری سے جو سی سی ٹی وی فٹیج ملے ہیں ان میں صمد کی شکل سے ملتا ایک نوجوان ہے جس کے کندھے پر دو بیگ تھے۔ بعد میں وہ ایک بیگ لے کر باہر نکلا۔ صمد کے گھر والوں کا دعوی ہے کہ صمد پونے میں نہیں اس وقت گھر پو موجود تھے۔

صمد یکم جون تک اے ٹی ایس پولیس کی تحویل میں رہیں گے۔ پولیس کے مطابق پونے جرمن بیکری دھماکہ مبینہ طور پر انڈین مجاہدین نامی تنظیم کے اراکین نے کیا تھا اور صمد کے بھائے یاسین بھٹکل جو انڈین مجاہدین کے مبینہ رکن ہیں ، پولیس انہیں گزشتہ چار برسوں سے تلاش کر رہی ہے۔

اسی بارے میں