آندھرا:پولیس فائرنگ، چار ہلاک

فائل فوٹو
Image caption فائل فوٹو

بھارت کی ریاست آندھرا پردیش میں کسانوں کے ایک احتجاجی مظاہرے پر پولیس کی فائرنگ سے چار افراد ہلاک ہو گئے ہیں۔

ریاست کے ضلع شری کاکلم میں ایک بجلی گھر کے منصوبے کی تعمیر کے مسئلے پر کسانوں اور حکومت کے درمیان کافی دنوں سے تنازعہ چل رہا تھا اور گزشتہ روز یہ تنازعہ تشدد کی شکل اختیار کر گيا۔

سوم پیٹ کے علاقے میں ماہی گیروں اور کسانوں کے درمیان جھڑپ ہوئی جس پر پولیس نے گولی چلا دی۔ اس واقعے میں چار افراد پولیس کی گولی لگنےسے ہلاک اور ایک سو سے زیادہ زخمی ہوئے ہیں۔

پولیس نے مظاہرین پر لاٹھی چارج بھی کیا جس میں درجنوں خواتین زخمی ہو ئیں جبکہ ریاستی وزیر داخلہ ایس آئی ریڈی نے کہا ہے کہ مظاہرین کی طرف سے پتھراؤ کیا گیا ہے جس سے بہت سے پولیس اہل کار زخمی ہوئے ہیں۔

مظاہرین نے پولیس کی کئی گاڑیوں کو آگ لگادی۔ کوئلے سے بجلی بنانے والی ناگ ارجنا کمپنی جو یہ کارخانہ تعمیر کرنے والی تھی اس کے دفتر میں بھی توڑ پھوڑ ہوئی ہے۔

علاقائی کسانوں اور ماہی گیروں کا کہنا ہے اس کارخانے کی تعمیر سے علاقے میں زبردست آلودگی کا خطرہ ہے جس سے ان کی کھیتی باڑی اور ان کے روزگار پر بُرا اثر پڑےگا۔

اس منصوبے کے لیے پانچ سو سترہ ایکڑ زمین کی ضرورت ہے اور کسان اپنی زمین دینے کے لیے راضی نہیں ہیں۔ حکومت کا کہنا ہے کہ وہ اس منصوبہ پر از سر نو غور کرےگی۔

اسی بارے میں