امیت شاہ کیس: ’حکومت کا ہاتھ نہیں‘

منموہن سنگھ
Image caption سہراب الدین معاملے کی تحقیقات سی بی آئی سپریم کورٹ کی ہدایت پر کر رہی ہے: منموہن سنگھ

بھارت کی پارلمینٹ کااجلاس شروع ہونے سے قبل وزیر اعظم منموہن سنگھ نے کہا ہے کہ گجرات کے وزیر داخلہ امیت شاہ کی گرفتاری میں ان کی حکومت کا کوئی ہاتھ نہیں ہے۔

یہ بات انہوں نے حزب اختلاف کی جماعت بھارتیہ جنتا پارٹی کے اس الزام کو مسترد کر دیا ہے کہ گجرات کے وزیر داخلہ امیت شاہ کی گرفتاری مین ان کی حکومت کا کوئی ہاتھ ہے۔ انہوں نے کہا ہے وہ پارلیمنٹ میں اس معاملے پر بحث کے لیے تیار ہیں ۔

بی جے پی کے الزامات کا جواب دیتے ہوئے منموہن سنگھ نے کہا کہ حکومت کا کوئی ہاتھ نہیں ہے اور حزب اختلاف کو اس کے بارے میں اچھی طرح معلوم ہے۔

’سہراب الدین معاملے کی تحقیقات سی بی آئی سپریم کورٹ کی ہدایت پر کر رہی ہے۔ اس میں مرکزی حکومت کا کوئی کردار نہیں ہے۔ حکومت نے تفتیش کے عمل پر کسی طرح بھی اثر انداز ہونے کی کوشش نہیں کی ہے۔‘

تاہم بی جے پی نے مسٹر سنگھ کے اس بیان کو رد کرتے ہوئے اس الزام کو دہرایا ہے کہ حکومت سی بی آئی کو اپنے سیاسی مفاد کے لیے استعمال کر رہی ہے۔ پارٹی کے سینیئر رہنما وینکیا نائیڈو نے کہا ’کیا سہراب ا لدین کوئی قومی ہیرو ہے جس کے معاملے میں گجرات کے وزیر داخلہ تک کو گرفتار کیا گیا ہے۔‘

گجرات کے سابق وزیر داخلہ سات اگست تک احمدآباد کی جیل میں رہیں گے۔ وہ پیر کو ہائی کورٹ میں اپنی ضمانت کی درخواست داخل کرنے والے ہیں۔

سی بی آئی نے اس دوران ریاست کے دو سابقہ پولیس سربراہوں کو پوچھ گچھ کے لیے طلب کیا ہے۔

سی بی آئی نے ابھی تک امیت شاہ سے پوچھ گچھ کے لیے اپنی تحویل میں نہیں لیا ہے۔

سی بی آئی کو سہراب الدین فرضی جھڑپ معاملے کی تفتیش کی مکمل رپورٹ تیس جولائی تک سپریم کورٹ کو پیش کرنی ہے ۔

سی بی آئی کو پیر کے روز ایک اور کامیابی اس وقت ملی جب پہلے سے گرفتارشدہ ایک اعلیٰ پولیس افسر نے سرکاری گواہ بننے کی درخواست کی۔

اسی بارے میں