لداخ سیلاب، چھبیس فوجی بہہ گئے

لداخ
Image caption لداخ میں سیلاب کے سبب سو سے زیادہ افراد ہلاک اور کی سو افراد لاپتہ ہیں

بھارت کے زیر انتظام کشمیر کے خطے لداخ میں شدید سیلاب کے سبب سیاچن کے قریب تعینات چھبیس بھارتی فوجی پانی میں بہہ کر پاکستانی زیر انتظام کشمیر چلے گئے ہیں۔ پاکستان سے مدد مانگی گئی ہے۔

بھارتی فوج کے ایک سینیئر اہلکار نے بتایا ہے کہ یہ جوان ترتک کے نزدیک تعینات تھے سیلاب کے بعد انکا کچھ پتہ نہیں ہے۔

فوج نے پاکستان سے مدد مانگی ہے۔ یہ فوج کے جوان بہار انفینٹری ریجیمنٹ کے ہیں اور فوج کو خدشہ ہے کہ سیلاب کے سبب یہ فوجی بہہ کر پاکستان کے زیر انتظام کشمیر چلے گئے ہیں۔

ان فوجیوں میں تین جونئیر کمیشنڈ افسر بھی شامل ہیں۔

بی بی سی بات کرتے ہوئے فوج کے ایک سینئیر اہلکار نے اس خبر کی تصدیق کی ہے اور کہا ہے کہ جوانوں کی تلاش جاری ہے۔

خبررساں ایجنسی پی ٹی آئی کے مطابق ان جوانوں کو سیلاب جیسی صورتحال سے نمٹنے کی تربیت حاصل تھی لیکن گزشتہ 48 گھنٹوں سے انکی تلاش جاری ہے اور ابھی تک ان کے بارے میں کچھ معلوم نہیں ہوا ہے۔

پی ٹی آئی نے فوج کے ایک سینئیر اہلکار کے حوالے سے کہا ہے ’ایسا خدشہ ہے کہ یہ فوجی بہہ کر پاکستان کے زیر انتظام کشمیر کی جانب چلے گئے ہیں۔ فوجیوں کا پتہ لگانے کے لیے ہم نے پاکستانی انتظامیہ کی مدد مانگی ہے۔‘

جمعہ کے روز لداخ میں بادل پھٹنے کے سبب جو سیلاب آیا تھا اس میں اب تک ایک سو تیس سے زیادہ لاشوں کو نکالا جاچکا ہے۔ تاہم اندیشہ کہ لوگ ملبے کے نیچے دبے ہوئے ہیں۔

وادی کے مشرقی خطے لداخ میں طوفانی بارش کے بعد تباہ کُن سیلابی ریلے میں مرنے والوں کی تعداد میں اضافے کا خدشہ ہے جبکہ کسی سو زخمی ہوئے ہیں۔

اسی بارے میں