بھارت میں سیلاب کا خطرہ

جمنا
Image caption دلی سمیت کئی ریاستوں میں بارش ہورہی ہے

بھارت میں تیز بارشوں کے بعد کئی دریا خطرے کے نشان سے اوپر بہہ رہے ہیں، سیلاب کے خدشے کے پیش نظر کئی علاقوں سے نقل مکانی کا سلسلہ شروع ہوگیا ہے۔

لگاتار ہو نے والی بھاری بارش کی وجہ سے دلی میں جمنا سمیت شمالی بھارت کے کئی دریا خطرے کے نشان سے اوپر بہہ رہے ہیں۔ گنگا، گھاگھرا، شاردا اور سریو دریاؤں میں پانی کی سطح بڑھی ہوئی ہے اور آس پاس کے دیہات تک پانی پہنچنے لگا ہے۔

لیکن فی الحال کسی جانی یا بڑے پیمانے پر مالی نقصان کی اطلاع نہیں ہے۔

منگل کو دلی میں جمنا میں مزید پانی آنے کا امکان ہے۔ ادھر شمال مشرقی ریاست آسام سے بھی اطلاعات ہیں کہ برہم پتر اور اس کی معاون ندیوں کا پانی نچلے علاقوں میں داخل ہوگیا ہے۔

پنجاب، ہریانہ، ہماچل پردیش اور اتراکھنڈ کی کئی ندیوں میں بھی پانی لگاتار بڑھ رہا ہے۔ انتظامیہ نے سیلاب سے پیدا ہونے والی صورتحال سے نمٹنے کے لیے انتظامات کیے ہیں اور بہت سے لوگوں کو محفوظ مقامات پر منتقل کیا گیا ہے۔

ہریانہ کے ہتھنی کنڈ بیراج سے پانی چھوڑے جانے کے بعد جمنا میں پانی کی سطح بڑھ رہی ہے۔ دلی کے آس پاس کے علاقوں میں جمنا کے کنارے آباد کئی بستیوں میں پانی بھر گیا ہے۔

افسران کا کہنا ہے کہ سیلاب کی صورتحال کو دیکھتے ہوئے کشتیاں اور غوطہ خور تیاری کی حالت میں ہیں۔

شمالی بھارت کے پہاڑی علاقوں میں گزشتہ بدھ سے بارش ہو رہی ہے۔کئی علاقوں میں زمین کھسکنے کے واقعات کی بھی اطلاعات ہیں جس کی وجہ سے نقل و حرکت متاثر ہوئی ہے۔

پنجاب سے اطلاعات ہیں کہ بارش سے کافی بڑے علاقے میں فصلوں کو نقصان پہنچا ہے اور بھارت کے دوسرے سب سے بڑے ڈیم بھاکڑا میں پانی لبا لب بھرا ہوا ہے۔

گنگا میں بھی تغیانی کی اطلاعات ہیں اور بجنور بیراج سے پانی چھوڑے جانے کی وجہ سے دریا میں پانی کی سطح بڑھ رہی ہے۔

اسی بارے میں