بھارت چین کی بڑھتی فوجی قوت سے پریشان

وی کے سنگھ
Image caption جنرل سنگھ کے مطابق سرحد پار سے دراندازی بڑھی ہے

بھارتی فوج کے سربراہ جنرل وی کے سنگھ نے کہا ہے کہ ملک کو پاکستان میں دہشت گردی کے انفراسٹرکچر اور چین کی بڑھتی ہوئی فوجی قوت سے پریشانی لاحق ہے۔

بھارتی فوج کے سربراہ نے دلی میں ’بھارتی فوج، ابھرتے ہوئے رول اور ذمہ داریوں‘ کے موضوع پر ایک سیمینار سے خطاب کے دوران یہ باتیں کہیں۔

ان کا کہنا تھا ’ہمارے لیے دو مسئلے ہیں، ایک پاکستان کی صورتحال کی وجہ سے جہاں حکمرانی کا فقدان ہے، جہاں کچھ دہشت گردوں کو ایک حد تک حمایت فراہم کی جارہی ہے اور جہاں داخلی حالات بہت اچھے نہیں ہیں۔‘

جنرل سنگھ نے کہا کہ ہندوستان کو اس وقت تک تشویش رہے گی جب تک سرحد پار دہشت گردی کا انفراسٹرکچر برقرار ہے۔

انہوں نے کہا ’اسی طرح چین بھی اقتصادی اور فوجی لحاظ سے ترقی کر رہا ہے۔ اور گرچہ چین کے ساتھ اعتماد کو فروغ دینے کے لیے اقدمات پر عمل کیا جا رہا ہے، لیکن پھر بھی ہمارے اور چین کے درمیان سرحد پر تنازعہ ہے۔ اس کی بڑھی ہوئی فوجی قوت کے ساتھ ساتھ اس کے ارادوں پر بھی نگاہ رکھی جانی چاہیے۔‘

فوج کے سربراہ کا کہنا تھا کہ چیلنجوں اور خطرات کی نشاندہی کرنے کے بعد ہی فوج کے رول کا صحیح تعین کیا جاسکتا ہے۔ ’چین کے ساتھ ہماری سرحد مستحکم ہے لیکن پھر بھی کوئی خطرہ مول نہیں لیا جاسکتا۔‘

خبر رساں ادارے پی ٹی آئی کے مطابق انہوں نے کہا کہ چین کے ساتھ باقاعدہ جنگ کے بارے میں وثوق کے ساتھ کچھ نہیں کہا جاسکتا لیکن ’جھڑپیں ہوسکتی ہیں۔‘

انہوں نے کہا ہمارے پاس روایتی ہتھیاروں سے جنگ لڑنے کی بھر پور صلاحیت ہونی چاہیے لیکن ساتھ ہی ’جوہری تناظر‘ میں بھی جنگ کے لیے تیار رہنا چاہیے۔

اس سے پہلے بدھ کو فوج کے سربراہ نے کہا تھا کہ پاکستان سے ہندوستان میں دراندازی بڑھ رہی ہے لیکن بھارتی فوج اسے کنٹرول کرنے میں ایک حد تک کامیاب بھی ہوئی ہے۔ سکیورٹی فورسز کا دعوی ہے کہ گزشتہ دو مہینوں میں دراندازی کی تقریباً دو درجن کوششوں کو ناکام بنایا گیا ہے۔

اسی بارے میں