انعام ایک سو ایک کلو گھی

ہریانہ کا باکسر
Image caption ہریانہ کے کھلاڑیوں نے دلی کے کھیلوں میں انڈیا کی طرف سے سب سے زیادہ تمغے حاصل کیے

ہریانہ میں ایک کہاوت ہے ’دودھ دہی کا کھانا، دیس میں دیس ہریانہ‘ اور اسی کہاوت پر عمل کرتے ہوئے ہریانہ کی ریاستی حکومت نے دولت مشترکہ کھیلوں میں تمغے حاصل کرنے والے اپنے ایتھلیٹوں کو کار اور بڑی رقم کے علاوہ ایک سو ایک کلو گھی بھی انعام میں دیا ہے۔

ہریانہ کی حکومت نے سونے کے تمغے جیتنے والے کھلاڑیوں کو پندرہ لاکھ روپے، ایک لگژری کار، ایک موبائیل فون اور ایک سو ایک کلو گھی انعام میں دیا ہے۔

چاندی کے تمغے جیتنے والوں کو دس لاکھ روپے، ایک چھوٹی کار اور اکیاون کلو گھی دیا گیا ہے اور کانسی کا تمغہ جیتنے والوں کو پانچ لاکھ روپے، ایک کار اور ایکیس کلو گھی دیا گیا ہے۔

ہریانہ کی ریاست سے تعلق رکھنے والے کھلاڑیوں نے کھیلوں میں سونے کے سولہ اور چاندی اور کانسی کے آٹھ آٹھ تمغے جیتے تھے۔

دولت مشترکہ کھیلوں میں کشتی میں سونے کا تمغہ جیتنے والی گیتا کا کہنا تھا کہ انہیں کار ملنے کی خوشی ہے ’میں کافی خوش ہوں مجھے تو گاڑی چلانی آتی ہے لیکن میری بہن ببیتا کو نہیں آتی لیکن میں اسے سکھا دوں گي۔‘

Image caption گیتا اور ببیتا نے کشتی میں سونے اور چاندی کے تمغے حاصل کیے تھے

ببیتا نے کشتی کے مقابلے میں چاندی کا تمغہ جیتا تھا۔

نشانے باز گگن نارنگ نے چار سونے کے تمغے جیتے تھے اس لیے انہیں سینتیس لاکھ روپے ملے اور شوٹر انیسہ سعید کو دو سونے کے تمغے جیتنے کے لیے بائیس لاکھ روپے ملے۔

اس موقع پر ہریانہ کے وزیر اعلی بھوپندر سنگھ ہڈا نے کہا کہ ’جو کھلاڑی ہریانہ میں رہ کر کام کرنا چاہتا ہے اسے ان کی صلاحیت کے حساب سے نوکری بھی دی جائے گی۔‘

انہوں نے یہ بھی اعلان کیا آئندہ ماہ ہونے والے ایشیائي کھیلوں میں سونے کا تمغہ جیتنے والے کھلاڑیوں کو پچیس پچیس لاکھ روپے انعام میں دیئے جائیں گے۔

اسی بارے میں