ایشیائی کھیل: بھارت کی’بہترین‘ کارکردگی

بجرنگ لال ٹھکر
Image caption انفرادی سکل روؤنگ میں بجرنگ نے گولڈ میڈل حاصل کیا

چین کے شہرگوانگزو میں منعقدہ ایشیائی کھیلوں میں بھارت نے اس بار ان کھیلوں میں اپنی سب سے اچھی کارکردگی کا مظاہرہ کیا ہے۔

بھارت نے ان کھیلوں میں کل چونسٹھ میڈل جیتے جن میں چودہ طلائی، سترہ نقرئی اور کانسی کے تینتیس تمغے شامل ہیں۔

ان تمغوں کی بدولت بھارت ان گیمز میں چھٹے مقام پر رہا جبکہ پچھلی بار دوہا کے ایشیائی کھیلوں میں وہ آٹھویں درجے پر تھا۔

بھارت نے ایشیاڈ میں اس سے قبل سونے کے اتنے تمغے کبھی بھی حاصل نہیں کیے تھے۔

جمعہ کے روز بھارت کو چار طلائی تمغے ملے جس میں سے دو خواتین اور مردوں کے کبڈی کے مقابلے میں تھے۔ایتھلیکٹس میں بھی رکاوٹوں کی دوڑ کے مقابلے میں خواتین نےگولڈ میڈل جیتا اور باکسر وجیندر کمار بھی گولڈ میڈل جیتنے میں کامیاب ہوئے۔

Image caption خواتین ایک بار پھر اچھی کارکردگی کا مظاہرہ کیا

چونسٹھ تمغے بھارت کی ایشیائی کھیلوں میں اب تک کی بہترین کارکردگی ہے۔ اس سے قبل سنہ انیس سو بیاسی میں دلی میں ہوئے ایشیائی کھیلوں میں اس نے ستاون تمغے حاصل کیے تھے۔

تاہم دلی میں حال ہی میں ختم ہوئے کامن ویلتھ کھیلوں کے مقابلے میں بھارت کی ایشیائی کھیلوں میں کارکردگی مایوس کن رہی ہے۔دولت مشترکہ کھیلوں میں اس نے دوسری پوزیشن حاصل کی تھی اور نشانے بازی، کشتی اور بیڈمنٹن میں اچھی کارکردگی کا مظاہرہ کیا تھا۔

لیکن ایشیائی کھیلوں میں چین، کوریا اور ایران جیسے ممالک کی موجودگی میں بھارتی کھلاڑیوں کی کارکردگی معیار کے مطابق نہ رہی۔

سولہویں ایشیائی کھیلوں میں چین ایک سو ننانوے گولڈ میڈل حاصل کر کے سرِ فہرست رہا ہے۔ یہ ایشیائی کھیلوں میں چین کی بھی سب سے بہترین کارکردگی ہے۔

اسی بارے میں