بدعنوانی کے خلاف تحریک پر اجلاس طلب

انّا ہزارے تصویر کے کاپی رائٹ ap
Image caption انّا ہزارے کا فاسٹ رام لیلا گراؤنڈ پر جاری ہے

حکومت نے بدعنوانی کے خلاف سماجی کارکن انا ہزارے کی عوامی تحریک سے پیدا ہونے والے سیاسی بحران کا حل تلاش کرنے کے لیے بدھ کو کل جماعتی اجلاس طلب کیا ہے۔

لیکن تحریک کے رہنماؤں نے کہا ہے کہ مطالبات تسلیم ہونے تک ہڑتال ختم نہیں کی جائےگی۔

یہ اشارے بھی ہیں کہ تحریک کے رہنماؤں سے بھی باضابطہ مذاکرات شروع کیے جاسکتے ہیں لیکن اس سلسلے میں ابھی کوئی اعلان نہیں کیا گیا ہے۔

وزیر اعظم من موہن سنگھ نے منگل کو بھی اپنی یہ پیش کش دہرائی تھی کہ وہ اس تنازعہ کو حل کرنے کے لیے بات چیت کے لیے تیار ہیں۔

تحریک کے ایک رہنماء اروند کیجری وال نے کہا کہ حکومت فوری طور پر سیاسی مذاکرات شروع کرے اور اگر کوئی پیش رفت ہوتی ہے تو اسے کل جماعتی اجلاس کے سامنے رکھا جاسکتا ہے۔

ان کا کہنا تھا ’حکومت وقت ضائع کر رہی ہے، بات چیت ہوگی تو کوئی راستہ نکل سکتا ہے لیکن جب تک یہ عمل شروع نہیں ہوتا، بھوک ہڑتال ختم نہیں کی جائے گی۔’

غیر سرکاری رابطہ کاروں کے ذریعہ انا ہزارے کے کیمپ سے بات چیت ہوئی ہے لیکن کسی پیش رفت کی اطلاع نہیں ہے۔ بتایا جاتا ہے کہ روحانی گورو شری روی شنکر نے انا ہزارے کے سامنے حکومت کا تجویز کردہ ایک فارمولہ رکھا تھا جسے مسترد کر دیا گیا ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ ap
Image caption انّا ہزارے کی بھوک ہڑتال پر پارلیمان بھی ہنگامہ ہوا ہے

خبر رساں ادارے پی ٹی آئی کےمطابق کل جماعتی اجلاس بدھ کو دوپہر ساڑھے تین بجے طلب کیا گیا ہے اور لوک پال بل کے بارے میں کوئی حتمی فیصلہ کیے جانے سےقبل سیاسی جماعتوں میں اتفاق رائے پیدا کرنے کی کوشش کی جائے گی۔

انا ہزارے کی بھوک ہڑتال کا منگل کو آٹھواں دن ہے لیکن ان کی صحت کی نگرانی کرنے والے ڈاکٹروں کی ٹیم کا کہنا ہےکہ ابھی خطرے کی کوئی بات نہیں ہے حالانکہ ان کا وزن تقریباً پانچ کلو کم ہوگیا ہے۔

دلی کے رام لیلا میدان میں بدستور بھیڑ جمع ہے لیکن لوگوں کی تعداد سنیچر اور اتوار کے مقابلے میں فی الحال کافی کم ہے۔

منگل کی شام کانگریس کے ترجمان اور حکومت کے لوک پال بل کا جائزہ لینے والی مجلس قائمہ کے چیئرمین ابھی شیک منو سنگھونی نے کہا تھا کہ انا ہزارے اگر آٹھ ہفتوں کےلیے اپنی بھوک ہڑتال معطل کردیں تو ان کے کچھ مطالبات کو تسلیم کرنے کا راستہ نکالا جاسکتا ہے۔

اروند کیجری وال نے کہا کہ حکومت اگر سنجیدہ ہے تو ان کے مطالبات چوبیس گھنٹے میں تسلیم کیے جاسکتے ہیں اور ابھیشیک منوسنگھوی کی تجویز صرف ان کی تحریک کو کمزور کرنے کی کوشش ہے۔

انا ہزارے اور ان کے ساتھی بدعنوانی کی روک تھام کے لیے وضع کیے جانے والے ایک بل کے دائرے میں وزیر اعظم اور عدلیہ کو بھی شامل کرنا چاہتے ہیں جس کے لیے حکومت تیار نہیں ہے۔

اسی بارے میں