حکومت اور انّا کے درمیان تعطل برقرار

انّاہزارے تصویر کے کاپی رائٹ AP
Image caption ڈاکٹروں کے مطابق انا ہزارے کافی کمزور ہوگئے ہیں

سنیچر کے روز اناہزارے کی ٹیم نے حکومت کے نمائندوں سے پہلے مرحلے کی بات چيت کے بعد سرکاری رویہ پر مایوسی کا اظہار کیا ہے اور کہا ہے کہ اس سے مسئلہ کے حل میں مدد نہیں ملے گی۔

ادھر اس مسئلے پر پارلیمان میں بحث جاری ہے جس میں تمام پارٹیاں اپنے موقف کی وضاحت کر رہی ہیں۔

بات چیت کے بعد سپریم کورٹ کے سرکردہ وکیل پرشانت بھوشن نے کہا پہلے ان کی ٹیم کو اس بات کا احساس دلایا گیا تھا کہ انا ہزارے کی تینوں بنیادی مطالبات کو تسلیم کرنے کے لیے پارلیمان قرارداد منطور کریگی یا پھر اس پر ووٹنگ ہوگی لیکن اب وہ اس طرح کی یقینی دہانی سے گریز کر رہی ہے۔

ان کا کہنا تھا '' اب کہا جارہا ہے کہ اس پر کوئی باقاعدہ قرارداد منظور نہیں ہوگی اور نا ہی ووٹنگ کرائی جائیگي۔ یہ بدقسمتی کی بات ہے۔ اس سے نا تو کوئی مدد ملیگی اور نا ہی اس کا کوئي مطلب ہے۔''

امکان ہے کہ بحث کے بعد پارلیمان کوئی ایسا قدم اٹھائیگی جس سے انّا ہزاے اپنی بھوک ہڑتال ختم کر سکیں گے لیکن ابھی تک تعطل کی صورت حال برقرار ہے۔

Image caption ہزارے کی حمایت میں اب بھی لوگ بڑی تعداد میں نکل رہے ہیں

اس سے قبل صبح لوک پال قانون کے لیے بھوک ہڑتال پر بیٹھے انّا ہزارے کے درمیان تعطل کو ختم کرنے کے لیے پارلیمان میں بحث شروع کی گئی تھی جو ابھی جاری ہے۔

پارلیمان کا اجلاس شروع ہوتے ہی لوک سبھا کے لیڈر پرنب مکھرجی نے اس سے متعلق ایک حکومتی بیان پڑھا جس کے بعد حزب اختلاف کی رہنما شسما سواراج نے بحث آغاز کیا۔

گزشتہ روز بھارتیہ جنتا پارٹی نے بعض شرائط کے ساتھ انا ہزارے کی ان تینوں بنیادی باتوں کو تسلیم کرنے کی بات کہی تھی جن پر انّا کی ٹیم اصرار کرتی رہی ہے۔

بی جے پی کی رہنماء شسما سواراج نے لوک پال پر بحث کرتے ہوئے کہا کہ ان کی پارٹی وزیراعظم کو لوک پال کے دائرے میں لانے کی حامی ہے۔

انہوں نے عدالیہ کی جوابدہی کی بھی حمایت کی اور عدلیہ کو لوک پال کے دائرے میں لانے کے بجائے اس کے لیے ایک خصوصی جوڈیشیل کمیٹی بنانے کی تجویز پیش کی۔

بی جے پی نے انّا ہزارے کی ٹیم کے اس مطالبے کی بھی حمایت کی کہ مرکزی تفتیشی ادارے سی بی آئی کو بھی لوک پال کے دائر میں لا یا جائے۔

ارکان پارلیمان کو لوک پال کے دائرے میں لانے کے سوال پر انہوں نے کہا کہ ایوان کے اندر کی ارکان کی کارروائی کو لوک پال کے دائرے سے الگ رکھا جائے کیونکہ اس کی ضمانت آئین نے دی ہے۔ لیکن ایوان کے باہر کے ان کے کردار کو اس کے دائرے میں لایا جا سکتا ہے اور بی جے پی اس کی حامی ہے۔

بی جے پی نے اعلی نوکرشاہوں اور سرکاری ملازمین کو بھی لوک دائرے میں لانے کی حمایت میں کی ہے اور اس طرح اناّ ہزارے کے تینوں بنیادی نکات کی اس نے حمایت میں اعلان کیا ہے۔ شسما سواراج کا خطاب ابھی جاری ہے۔

اس دوران جن لوک پال بل کے مطالبے کے لیے رام لیلا گراؤنڈ پر انّا ہزارے کی بھوک ہڑتال آج بارہویں دن بھی جاری ہے۔

سنیچر کی صبح ڈاکٹروں نے ان کی صحت کی جانچ کے بعد کہا ہے کہ انّا ہزارے بےحد کمزور ہوگئے ہیں اور انہیں زیادہ سے زیادہ آرام کی ضرورت ہے۔

اسی بارے میں