اڑیسہ میں سیلاب سے لاکھوں افراد متاثر

فائل فوٹو تصویر کے کاپی رائٹ AP
Image caption سیلاب کے سبب لاکھوں لوگ بےگھر ہوئے ہیں

بھارت کی ریاست اڑیسہ میں حکام کے مطابق سیلاب کے سبب تقریباً 18 افراد ہلاک ہوئے ہیں اور 17 لاکھ بےگھر ہوگئے ہیں۔

زبردست بارشوں کے سبب اڑیسہ کے انیس اضلاع کے ڈھائی سو سے زائد گاؤں زیر آب آگئے ہیں۔

ریاست میں حکام کا کہنا ہے کہ تقریباً اکسٹھ ہزار لوگوں کو محفوظ مقامات پر پہنچایا گیا ہے اور لوگوں کو بچانے اور امدادی کاموں کے لیے آپریشن شروع کیا گیا ہے۔

ریاست کے سب سے بڑے دریا مہا نندا سمیت تقریباً سبھی ندیاں خطرے کے نشان سے اوپر بہہ رہی ہیں اور سیلاب کے پانی کے سبب کئی علاقوں سے زمینی رابطہ منقطع ہوگیا ہے۔

پوری، کیندراپارہ، کٹک، جگت سنگھ پور، سنبل پور، بودھ اور سونے پور کے اظلاع کے بہت سے راستے بھی سیلاب سے متاثر ہوئے ہیں۔

خبر رساں ادارے پی ٹی آئی کے مطابق سیلاب کے لیے خصوصی ریلیف کمشنر پی کے مہاپاترا کا کہنا ہے کہ ’امدادی آپریشن کی غرض سے بحریہ کا ایک جہاز اور ہیلی کاپٹر وشاکھاپٹنم سے چل پڑا ہے جو امدادی کاموں مدد کریگا۔‘

مہاپاترا کے مطابق ایک دوسرے ہیلی کاپٹر کو بھی فضا سے خوراک گرانے اور ودسری اشیاء مہیا کرنے کے لیے تیار رکھا گیا ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ بچاؤ اور امدادی کاموں کے لیے تقریباً چودہ سو کشتیوں کو استعمال کیا جارہا ہے۔

ریاست کے وزیر اعلی نوین پٹنائک نے سیلاب زدہ علاقوں کو فضائی سروے بھی کیا ہے۔

ایک نجی ٹی وی چینل سے بات بات چیت میں مسٹر پٹنائک نے کہا ’جو افراد سیلاب سے متاثر ہیں ان کی پریشانیوں کے ازالے کے لیے ہم ہر ممکن کوشش کر رہے ہیں۔ نقصانات کے جائزے کے بعد ہم مرکزی حکومت سے بھی مدد کی درخواست کریں گے۔‘

ادھر متاثرہ افراد کا کہنا ہے کہ انہیں ابھی کو امداد نہیں پہنچی ہے۔ پوری ضلع میں ایک خاتون نے ٹی وی چینل کو بتایا ’بجلی نہیں ہے، گزشتہ دو روز سے ہمارے گھر میں کھانا نہیں پکا ہے۔ ہمیں یہاں سے نکالنے کے لیے بھی کوئی نہیں آیا ہے۔‘

حکام کا کہنا ہے کہ اب بارش رک گئی ہے اور دریائے مہانندہ میں پانی بھی کم ہونے لگا ہے اس لیے حالات بہتر ہونے کی امید ہے۔

اسی بارے میں