ایک دن میں ایک سو ایس ایم ایس کی اجازت

تصویر کے کاپی رائٹ BBC World Service
Image caption بھارت میں اس سے پہلے بھی ناپسندیدہ ایس ایم ایس کی روک تھام کے لیے اقدامات کیے گئے ہیں

بھارت میں انتظامیہ نے موبائل فون پر ٹیلی مارکیٹنگ کمپنیوں کی طرف سے بھیجے جانے والے ناپسندیدہ پیغامات کو روکنے کے لیے ایس ایم ایس کی تعداد پر پابندی لگا دی ہے۔

اس پابندی کے تحت کوئي بھی شخص ایک دن میں اپنے فون سے ایک سو سے زائد ایس ایم ایس نہیں بھیج پائے گا۔

اس قدم سے بھارت میں ایسے لاکھوں لوگوں کو راحت ملے گی جن کے موبائل فون پر ہر روز مختلف اشیاء کے اشتہارت کے درجنوں پیغامات ایس ایم ایس کے ذریعے آتے تھے۔

بھارت میں اس سے پہلے بھی ناپسندیدہ ایس ایم ایس کی روک تھام کے لیے اقدامات کیے گئے ہیں لیکن وہ کارگر ثابت نہیں ہوئے۔

’دی ٹیلی کام ریگولٹری اتھارٹی آف انڈیا‘ نے اس سے پہلے رات نو بجے سے صبح نو بجے تک کسی بھی طرح کے کمرشل ایس ایم ایس یا کالز کو ممنوع قرار دیا تھا لیکن عام طور پر ایسی کالز رات کے دو تین بجے تک آتی رہتی تھیں۔

بہت سے لوگوں نے عدالت سے ان اشتہاری پیغامات کے متعلق شکایت بھی درج کی تھیں۔

عام طور پر ریئل سٹیٹ، کریڈٹ کارڈز، وزن گھٹانے کی مشینوں سے لے کر قسمت جاننے اور تقدیر سنوارنے تک کے پیغامات بھیجے جاتے ہیں۔

بھارت میں موبائل فون استعمال کرنے والے افراد کی ایک بڑی تعداد ہے اور اس شعبہ میں تیزی سے ترقی بھی ہو رہی ہے۔

اس کے ساتھ ہی ٹیلی مارکٹنگ کی دنیا پھیلتی جا رہی ہے اور ہر روز دنیا بھر کی چیزیں فروخت کرنے کے لیے درجنوں پیغامات بھیجے جاتے ہیں اور کمپنیوں سے کالز بھی کی جا تی ہیں۔

اسی بارے میں