یوپی، پہلے مرحلے کی پولنگ کی تاریخ تبدیل

الیکشن کمشنر، قریشی تصویر کے کاپی رائٹ elex commission
Image caption الیکشن کمیشن اس بار انتخابی اصول و ضوابط کی پابندی کے لیے سخت اقدامات کر رہا ہے

بھارتی الیکشن کمیشن نے اعلان کیا ہے کہ ریاست اترپردیش کے اسمبلی انتخابات کے پہلے مرحلے کی پولنگ چار فروری کے بجائے آٹھ فروری کو ہوگي۔

امکان ہے کہ مسلمانوں کا تہوار عید میلاد النّبی چار فروری کو ہوگا اس لیے یہ تبدیلی کی گئی ہے۔

ریاست اترپردیش میں اسمبلی کی کل چار سو تین سیٹیں ہیں اور پہلے مرحلے میں ساٹھ نشستوں پر انتخابات ہونے والے ہیں۔

اس ریاست میں کل سات مرحلوں میں انتخابات ہونگے۔ دوسرے مرحلے میں گیارہ تاریخ کو ووٹ پڑیں گے جبکہ تیسرے مرحلے میں پندرہ فرری کو ووٹ ڈالے جائیں گے۔

انیس فروری کو چوتھا مرحلہ مکمل ہوگا۔ تیئس کو پانچواں اور آخری مرحلے کا انتخابات اٹھائیس فروری کو ہوگا۔ یوپی کے ساتھ دیگر چار ریاستوں کی ووٹوں کی گنتی مارچ کے پہلے ہفتے میں ہوگی۔

اترپردیش میں ڈیڑھ دہائی سے زائد کی سیاسی غیر یقینی کے بعد دو ہزار سات کے اسمبلی انتخابات میں بی ایس پی نے واضح اکثریت حاصل کرکے حکومت بنائی تھی۔ لیکن اس بار اسے سخت مقابلے کا سامنا ہے۔

گزشتہ پانچ برسوں میں مایا وتی نے لکھنؤ اور دلی سے ملحق نوئیڈا میں اربوں روپے کی لاگت سے بڑے بڑے پارک تعمیر کیے ہیں جن میں پسماندہ ذاتوں کے عظیم رہنماؤں کے دیو قامت مجسمے نصب کیے گئے ہیں۔

لیکن اپوزیشن جماعتوں کی شکایات کے بعد الکیشن کمیشن نے انہیں ڈھکنے کے احکامات دیے ہیں اور اطلاعات کے مطابق اس پر عمل شروع ہوگیا ہے۔

مایا وتی کے مخالفین کہتے ہیں کہ وہ ملک کی واحد رہنما ہیں جنہوں نے اپنی ہی زندگی میں جگہ جگہ اپنے مجسمے لگوائے ہیں۔

بتایا جاتا ہے کہ مجسموں کو ڈھکوانے کا فیصلہ چیف الیکشن کمشنر ایس وائی قریشی نے لکھنؤ میں ایک میٹنگ کے دوران کیا جس میں انتخابات کے لیے کی جانے والی تیاریوں کا بھی جائزہ لیا گیا۔

اسی بارے میں